Ye haqeeqat hay jo dunya pe ayaan aaj bhi hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Yeh haqeeqat hay jo dunya pe ayaan aaj bhi hay
Khitta-e-Karb-o-bala ashk-e-jinaa aaj bhi hay

Tum ko dhoonday se milay ga na Yazeedi parcham
Aur alamdar-e-Hussaini ka nishaan aaj bhi hay

Ab na ruk paye ga rokay se kabhi zikr-e-Ali
Rifat-e-dar se Meesum ka bayan aaj bhi hay

Kabhi hizyan ki tuhmat to kabhi fatwa-e-Kufar
Fatwa sazi ki jo kal thi woh dukaan aaj bhi hay

Janishan Ahmed-e-Mursal ke thay kal bhi waris
Koi ghaibat may hamara nigaran aaj bhi hay


Yeh Habib ibn-e-Mazahir ne qamar kas ke kaha
Nusrat-e-Sheh may mera azm jawan aaj bhi hay

Muddaton pehlay jalaey thay laeeno ne khayam
Karbala teri fazaoon may dhuwan aaj bhi hay

Khainch li seena-e-Akbar se shah-e-deen ne sina
Umm-e-Laila ke kalaijay may sina aaj bhi hay

Moat ne bachi ko zindan se reha kar to diya
Qaid khanay may Sakina ki fughan aaj bhi hay

Karbala ja ke yeh ihsas hua ham ko Zafar
Shah-e-Mazloom ki maa girya kunaa aaj bhi hay

یہ حقیقت ہے جو دنیا پہ عیاں آج بھی ہے
خطہِ کرب و بلا رشکِ جناں  آج بھی ہے

تم کو ڈھونڈے سے ملے گا نہ یزیدی پرچم
اور علمدارِ حسینی کا نشاں  آج بھی ہے

اب نہ رک پائے گا روکے سے کبھی ذکرِ علیؑ
رفعتِ دار سے میثم کا بیاں  آج بھی ہے

کبھی ہذیان کی تہمت تو کبھی فتوئہِ کفر
فتوہ سازی کی جو کل تھی وہ دکاں آج بھی ہے

جانشیں احمدِ مرسل کے تھے کل بھی وارث
کوئی غیبت میں ہمارا نگراں  آج بھی ہے

یہ حبیبِ ابنِ مظاہرؑ نے کمر کس کے کہا
نصرتِ شہہ میں میرا عزم جواں  آج بھی ہے

مدتوں پہلے جلائے تھے لعینوں نے خیام
کربلا تیری فضائوں میں دھواں  آج بھی ہے

کھنیچ لی سینہ اکبرؑ سے شہہِ دیں نے سناں
امِۤ لیلی کے کلیجے میں سناں  آج بھی ہے

موت نے بچی کو زنداں سے رہا کر تو دیا
قید خانے میں سکینہؑ کی فغاں  آج بھی ہے

کربلا جا کے یہ احساس ہوا ہم کو ظفر
شہہِ مظلوم کی ماں گریہ کناں  آج بھی ہے