Meray aaqa pe itnay darood
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

ربِّ کعبہ محمد کے نام   
تیری عظمت ہے جتنی تمام
جِن کی خاطر یہ دنیا بنی
اور اُن کے ہے جتنے غُلام
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

جتنے ارض و  سماوات ہیں 
جِتنے تیرے کرِشمات ہیں 
نالے، ندیاں، سمندر کے اور
جتنے پانی کے قطرات ہیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

جتنے سورج کے لمحات ہیں 
جو فِضاؤں میں زرّات ہیں 	
دونوں عالَم میں موجود جو
سارے جِنّات و انسان ہیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

جتنے بھی تیرے عطیات ہیں 
جو زمیں کے نباتات ہیں 
جتنی اشیا زمانے میں ہیں 
جتنے بندوں کے سَوغات ہیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

گُزرے جتنے بھی دِن رات ہیں 
باقی جتنے بھی دِن رات ہیں 
جتنی دنیا کی تاریخ ہے
اُس کے جتنے بھی لمحات ہیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

بیل بُوٹے شجر جتنے ہیں 
پُھول پتّے ثمر جتنے ہیں 
ریگزارے ہوں کنکر ہو یا
کوہسار و ہجر جتنے ہیں 	
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

جنگلوں میں درِند جتنے ہیں 
چَوپائے چَرند جتنے ہیں 
جتنے پَروانے جُگنومَگس
اور اُڑتے پَرند جتنے ہیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

جتنی باغوں میں ہیں تِتلیاں 
جتنی پانی میں ہیں مچھلیاں 
چاند تارے ہوں یا کہکشاں 
جو گھٹاؤں میں ہیں بِجلیاں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام
جتنے تیرے زمانے بنے 
رِزق کے جتنے دجِانے بنے
انبیاء اولیا اصفیا
جتنے تیرے دیوانے بَنے
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

دوجہاں میں خزینے جو ہیں 
اور زمیں میں دفینے جو ہیں 
لعل یاقوت  مرجان اور
ہیرے موتی نگینے جو ہیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

جتنے صالح وہ  اَبرار ہیں 
جتنے دنیا کے اَسرار ہیں 
جتنے الفاظ و کلمات ہیں 
جتنے نعتوں کے اشعار ہیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

جتنی شہدا کی ہیں نیکیاں 
تیرے وَلیوں کی ہیں نیکیاں 
جتنے حفّاظ و حجّاج کی
نیک بندوں کی ہیں نیکیاں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

دِہر میں جو کِتابات ہیں 
اور اُن میں جو صفحات ہیں 
جو سوالات اُن سب میں ہیں 
اور جتنے جوابات ہیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

جتنی دنیا کی مخلوق ہے
جتنی پانی کی مَخلوق ہے
حادثِ کُل ہے مَولا تُو ہی
تیری جتنی بھی مَخلوق ہے
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

رنگ رنگ کے حجر جتنے ہیں 
جنّتوں میں شجر جتنے ہیں 
حُور و غلماں وہ سارے مَلک
اور فَرشتوں کے پَر جتنے ہیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

جتنے اب تَک پڑھیں ہیں دُرود
جتنے آگے پڑھیں گے دُرود
مَولا تُو اور فرشتے تیرے
جتنے بھیجیں سلام و دُرود
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

کعبے کے جو عِبادات ہیں 
قَدر کی شب کے دَرجات ہیں 
ماہِ رمضان کی نیکیاں 
اُس کے جو بھی حِسابات ہیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام

ناتواں ؓ ہے زبانِ مُبیں 
پھر بھی اُس کو ہے تجھ پہ یقیں 
اپنے محبوب ہی کے طُفیل
سُن لے اب اِلتجاءِ مُبیں 
میرے آقا پہ اُتنے درود		میرے آقا پہ اُتنے سلام