Sar bulandi ki riwayat sar katanay se chali
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

سر بلندی کی روایت سر کٹانے سے چلی
نبظ ایماں تیری نبظیں ڈوب جانے سے چلیں

نظر کی جاں ہی نہیں سب لخت جاں بھی کر دئے
ریت یہ تجھ سے چلی تیرے گھرانے سے چلی

تو نے معنی ہی بدل ڈالے سکست و فتح کے
رسم ہستی اپنی ہستی کو مٹانے سے چلی

گھر سے تجھ کو کربلا کی سمت جاتا دیکھ کر
ابر اٹھاصحرا سے بجلی آشیانے سے چلی

آنے والا لمحہ لمحہ تیری بیعت کر چکا
بات تیری از سر نوہر زمانے سے چلی

میں محمدؐ کاغلام آل محمدؐ کا غلام
اپنی ہر تصویر اسی آئینہ خانے سے چلی