Madad kijye ya Imam e Zamana
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Madad kijiye yaa imam e zamaana, imam e zamaana x2

Aseeran-e-Khilqat ki rudaad sunlo
do aalam ke haaqim ho faryaad sunlo
musalsal sitam dhaa raha hai zamaana
imam e zamaana.....
Madad kijiye yaa imam e zamaana, imam e zamaana x2

Hua yeh jahaan aafaton ka basera,
kidhar jaaiye chaar su hai andheraa
hai taqdeer mei kab talak gham uthaana

har ek bazm-e-aalam pe hai aake rona
har ek baat se aap raazik hai maula
bhala raaze dil aapko kya bataana

har ek ghaam tufaan ranjo bala hai
tumhei dukhtare shah ka waasta hai 
muhibbon ko sadmaat se bachaana

agar aap chaahein toh sabka bhala ho,
jo maqrooz hai karz unka ada ho,
ki hai aapki thokaron mei khazaana

kasam jalte khaimo ki deta hu tumko
ujadti hai duniya khudaara bachaa lo
hai sholon ki zadd par har ek aashiyaana

shahe deen ke waaris khuda ke sipaahi
hai maqtal mein mazloom ki begunaahi
ataa kijiye jazbaa-e-faatehaana

humein kaash turbat mei jaane se pehle
tujhe dekh lein maut aane se pehle
bhala zindagi ka hai koi thikaana

aseerane karbobala ki kasam hai
tumhein dukhtare fatima ki kasam hai 
jo qaidi hai unko rihaaye dilaana

kahin jaake harghiz na tasqeem hogi 
yakeenan mohabbat ki tauheen hogi
kisi aur ko haal e dil kya sunaana

hui shakhsiyaat uski naami giraami
falak ne bhi jhuk jhuk ke di hai salaami
jise mil gaya aapka aastaana

tumhein de raha hu kasam dhoond lena
ke aaka ke nakshe kadam dhoond lena
yeh kehkar kiyaaa sumon ko rawaana

bhala kaun deta hai kisko sahaara
tumhara karam mil gaya jo kinaara
safeene ki kismat toh thi doob jaana

kasam hai tumhe inki uftaad sunlo 
bilal aur aameer ki faryaad sunlo
aqeedat hai tumse bahot waalehaana

مدد کیجیے یا امام زمانہ ، امام زمانہؑ

اسیرانِ خلقت کی روداد سن لو 
دو عالم كے حاکم ہو فریاد سن لو 
مسلسل ستم ڈھا رہا ہے زمانہ 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

ہوا یہ جہاں آفتوں کا بسیرا
کدھر جائیے چار سو ہے اندھیرا 
ہے تقدیر میں کب تلک غم اٹھانا 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

ہر اک بزم عالم پہ ہے آکے رونا 
ہر اک بات سے آپ واقف ہیں مولا 
بھلا رازِ دل آپکو کیا بتانا 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

ہر اک غم طوفان رنج و بلا ہے 
تمہیں دخترِ شاہؑ کا واسطہ ہے 
محبّون کو صدمات سے بچانا 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

اگر آپ چاہیں تو سب کا بھلا ہو
جو مقروض ہیں قرض انکا ادا ہو
کہ ہے آپکی ٹھوکروں میں خزانہ 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

قسم جلتے خیموں کی دیتا ہو تم کو 
اجڑتی ہے دُنیا خدارا بچا لو 
ہے شعلوں کی زد پر ہر اک آشیانہ 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

شہہِ دیںؑ كے وارث خدا كے سپاہی 
ہے مقتل میں مظلوم کی بیگناہی 
عطا کیجیے جذبہءِ فاتحانہ
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

ہمیں کاش تربت میں جانے سے پہلے 
تجھے دیکھ لیں موت آنے سے پہلے 
بھلا زندگی کا ہے کوئی ٹھکانہ 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

اسیرانِ کرب وبلا کی قسم ہے 
تمہیں دخترِ فاطمہ کی قسم ہے 
جو قیدی ہے ان کو رہائی دلانہ 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

کہیں جاکے ھرگز نہ تقسیم ھوگی 
یقینا محبت کی توہین ھوگی 
کسی اور کو حال دِل کیا سنانا 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

ہوئی شخصیت اسکی نامی گرامی 
فلک نے بھی جھک جھک كے دی ہے سلامی 
جسے مل گیا آپکا آستانا 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

تمہیں دے رہا ہو قسم ڈھونڈ لینا 
كے آقا كے نقشِ قدم ڈھونڈ لینا 
یہ کہہ کر کیا سموں کو راوانہ
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

بھلا کون دیتا ہے کس کو سہارا
تمہارا کرم مل گیا جو کنارا 
سفینے کی قسمت تو تھی ڈوب جانا 
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ

قسم ہے تمہیں انکی افتاد سن لو 
بلال اور آمر کی فریاد سن لو 
عقیدت ہے تم سے بہت والھانہ
امامِ زمانہؑ امامِ زمانہؑ