Goonja Ali wali ka jo nara Ghadeer may
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

گونجا علیؑ ولی کا جو نعرہ غدیر میں
چُھوٹا بڑے بڑوں کا پسینہ غدیرمیں
                                  
بنجر دماغ و دل کو جو پانی کی چاہ تھی
صدیوں کا ابر ٹوٹ کے برسا غدیر میں

حیدرؑ کو دستِ مرسلِ اعظمؐ پہ دیکھ کر
تینوں کے تینوں ھوگئے رُسوا غدیر میں

یوسفؑ ترے جمال کی معراج دیکھتی
ہوتی جو کاش چشمِ زلیخا غدیر میں
                                  
مولا علیؑ کی شان میں مُرسلؑ کے رو برو
قنبر سنا رہے تھے قصیدہ غدیر میں
                               
حُور و مَلک ہوں یا ہوں رسولانِ ما سبق
چہرہ خوشی سے لال ہے سب کا غدیر میں
                             
جگنو چمک رہے ہیں ولایت کے باغ میں
ھے بُلبلِ ولِا کا بسیرا غدیر میں
                             
مختارِ کُل کے ھاتھ میں ایمانِ کُل کا ہاتھ
منظر سبھی نے صاف یہ دیکھا غدیر میں 
                              
صدیاں گئیں، ولایتِ مشکل کشاء کے بعد
مہدیِؔ کا دل ہنوز ھے ٹھہرا غدیر میں

لا تعداد درود وسلام
(ترمیم شدہ - رضوان رضوی)