Mehfil hay ya hay shehr e khamoshan teray baghair
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

محفل ہے یا ہے شہر خموشاں تیرے بغیر 
بیٹھے ہیں سَر جھکائے ثناء خواں تیرے بغیر 

الجھی ہوئی ہے زلفِ ذلیخہءِ انتظار 
سلجھائے کون یوسفِ دوران تیرے بغیر 

کیوں کر منائیں جشن بہاراں تیرے بغیر 
بے کیف سا ہے رنگِ گلستان تیرے بغیر 

آنکھوں میں دم رکھا ہے تیرے انتظار میں 
گو زندگی ہے ہَم سے گریزان تیرے بغیر 

اے دست پردہ پوش ذرا آشکار ہو 
ہے زلفِ کائنات پریشان تیرے بغیر 

سجدوں میں سر ہے دِل ہے حقیقت سے منحرف 
ہم ہیں برائے نام مسلماں تیرے بغیر 

دفنایا تھا حسینؑ نے جن کو فرات پر 
پِھر سر اٹھا رہے ہیں وہ طوفاں تیرے بغیر 

پِھر آ پڑی ہے تیری ضرورت سلیم کو 
ملتی نہیں ہے منزلِ عرفاں تیرے بغیر