Main Howa Sajda Howa Masjid Hoi Kaba Howa.
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Main howa sajda howa masjid hoi kaba howa
Har koi hai aap ke deedar ko tarsa howa

Dekhta rehta hoon hathon ki lakeerein raat din
Aap ka deedar ho shayad kahin likha howa

Aiye our kun ba izni keh ke zinda kijiye
Muntazir hoon zindagi ki qabar mein soya howa

Wo mujasim muntazir our main adhora intezar
Alajal kehte howay main youn bhi sharminda howa

Sun raha hoon aein gay Abbas(a.s) bhi sath aap ke
Kab se hai mera tasawwur bahi yahin tehra howa

Toor-e-kaba par tera deedar karne ke liye
Sar ke bal ayon ga Moula(a.s) main agar zinda howa

Azz Muhammad(a.s) ta Muhammad(a.s) dastakhat sab ne kiye
Sare ghar ke faisle se faisla hur(a.s) ka howa

Hal atta ki ayatein parh kar kiya hai khuda ko sair
Jab kabhi Akbar Ali(a.s) walon ke ghar faqa howa

میں ہوا سجدہ ہوا مسجد ہوئی کعبہ ہوا
ہر کوئی ہے آپ كے دیدار کو ترسا ہوا

دیکھتا رہتا ہوں ہاتھوں کی لکیریں رات دن
آپ کا دیدار ہو شاید کہیں لکھا ہوا

آئئے اور قم با ازنی کہہ كے زندہ کیجیے
منتظر ہوں زندگی کی قبر میں سویا ہوا

وہ مجسم منتظر اور میں اَدُھورا انتظار
العجل کہتے ہوئے میں یوں بھی شرمندہ ہوا

سن رہا ہوں آئیں گے عباسؑ بھی ساتھ آپ كے
کب سے ہے میرا تصور بھی یہیں ٹہرا ہوا

طورِ کعبہ پر تیرا دیدار کرنے كے لیے
سَر كے بل آؤں گا مولاؑ میں اگر زندہ ہوا

از محمدؐ تا محمدؑ دستخط سب نے کیے
سارے گھر كے فیصلے سے فیصلہ حُر کا ہوا

ھل عطا کی آیتیں پڑھ کر کیا ہے خود کو سیر
جب کبھی اکبر علیؑ والوں كے گھر فاقہ ہوا