Kia poochtay ho mujh se ke kia kia Hasan ka hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Kia poochtay ho mujh se ke kia kia Hasan ka hay
Jo kuch bhi hay Khuda ka wo sara Hasan ka hay

Ham kia hain keh raha hay ye khud deen e Mustafa
Mujh ko Ali ke baad sahara Hasan ka hay

Tabdeel kar kay jins Hasan ne bata diya
Kehtay hain jis ko kam wo ilaqa Hasan ka hay

Wajib samajh ke karta hoon may tab se lanatain
Jab se meri nazar may charaghan Hasan ka hay

Is khushkhati se chalti hay maidan e jang may
Lagta hay Zulfiqar pe saaya Hasan ka hay

Arzaq ki lash dekh ke boli ye foje Shaam
Allah ka ghazab hay ke beta Hasan ka hay

Kehnay ko dha diya usay aal e Saood may
Har dil may laikin aaj bhi roza Hasan ka hay

Allah se Ali ko mila hay wirasatan
Sochain agar to Khana e Kaaba Hasan ka hay

Kyunkar na do jahan may tu sarfaraz ho
Aey Meer ik gadagar tu to Hasan ka hay

کیا پوچھتے ہو مجھ سے كہ کیا کیا حسنؑ کا ہے 
جو کچھ بھی ہے خدا کا وہ سارا حسنؑ کا ہے 

ہَم کیا ہیں کہہ رہا ہے یہ خود دینِ مصطفیؐ 
مجھ کو علیؑ كے بعد سہارا حسنؑ کا ہے 

تبدیل کر کے جنس حسنؑ نے بتا دیا 
کہتے ہیں جس کو کُن وہ علاقہ حسن کا ہے 

واجب سمجھ كے کرتا ہوں میں تب سے لعنتیں 
جب سے میری نظر میں چراغاں حسنؑ کا ہے 

اِس خوشخطی سے چلتی ہے میدانِ جنگ میں 
لگتا ہے ذوالفقار پہ سایہ حسنؑ کا ہے 

ارزق کی لاش دیکھ كے بولی یہ فوجِ شام 
اللہ کا غضب ہے كے بیٹا حسنؑ کا ہے 

کہنے کو ڈھا دیا اسے آل سعود میں 
ہر دِل میں لیکن آج بھی روزہ حسنؑ کا ہے 

اللہ سے علیؑ کو ملا ہے وراثتاَ 
سوچیں اگر تو خانہءِ کعبہ حسنؑ کا ہے 

کیوں کر نہ دو جہاں میں تو سرفراز ہو 
اے میر اک گداگر توُ تو حسنؑ کا ہے