Kehtay hain log mujh ko sanagar Hasan ka hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

کہتے ہیں لوگ مجھ کو ثناء گر حسنؑ کا ہے 
اِحْسان یہ بھی مجھ پہ سراسر حسنؑ کا ہے 

چودہ برس میں فوجوں کو مسمار جو کرے 
قاسمؑ ہے اُس کا نام گل تر حسنؑ کا ہے 

امن و امان کی بھیک اگر چاہیے تمہیں 
آؤ یہاں سے مانگ لو یہ دَر حسنؑ کا ہے 

بے خوف پھرتے ظلم كے حامی جہاں میں 
پر دشمنِ امن کو فقط ڈر حسنؑ کا ہے 

صلحِ حسنؑ کو دیکھ لی اب جنگ دیکھنا 
پردے میں بیٹھا آخری دلبر حسنؑ کا ہے 

واللہ ایک نور كے دو عکس دیکھئے 
انکار میں حسینؑ كے تیور حسنؑ کا ہے 

جا کر کوئی سنا دے فرزدق کو یہ خبر 
افہام مدح خوان بھی نوکر حسنؑ کا ہے 

Kehtay hain log mujh ko sanagar Hasan ka hay
Ihsan ye bhi mujh pe sara sar Hasan ka hay

Chowda baras may fojon ko mismar jo karay
Qasim hay us ka naam gul e tar Hasan ka hay

Amn o amaan ki bheek agar chahye tumhain
Aao yahan se maang lo ye dar Hasan ka hay

Be khof phirtay zulm ke hami jahan may
Par dushman e amaan ko faqat dar Hasan ka hay

Sulhe Hasan ko dekh li ab jang dekhna
Parday may baitha aakhri dilbar Hasan ka hay

Wallah aik noor ke do aks dekhye
Inkar may Hussain ke taiwar Hasan ka hay

Ja kar koi suna de farazdaq ko ye khabar
Ifham madha khawan bhi nokar Hasan ka hay