Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa
Faqat Hussain milay ga Hussain ke jaisa

Ibadaton ka to jaari hay silsila ab tak
Namaz ko to namazi nahi mila ab tak
Karay jo khaak pe sajda Hussain ke jaise
Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa

Khuda bhi naaz karay fakhr e aalameen banay
Hay us Rasool ka haq shah e murasaleen banay
Hay jis nabi ka nawasa Hussain ke jaisa
Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa

Fazeelatain jo koi Karbala ki poochay ga
Mujhay yaqeen hay Kaaba jawab ye de ga
Nahi kisi ka bhi roza Hussain ke jaisa
Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa

Dilair maan rahi hain shujatain tum ko
Salam karti hain Asghar shahadatain tum ko
Hay cheh mahinay may jazba Hussain ke jaisa
Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa

Khuda hi janay ke Abbas kia hay shan teri
Ye manzilat ye saadat kisay naseeb hui
Tujhe samajhti hain Zehra Hussain ke jaisa
Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa

Shikast kis ki hay maidan may faisla kar lay
Daleel chorr day aa ja Mubahila kar lay
Hay teray paas to le aa Hussain ke jaisa
Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa

Ye sirf khat nahi tehrir hay muqaddar ki
Habeeb tum pe inayat hui hay Sarwar ki
Tumhay bulata hay Maula Hussain ke jaisa
Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa

Nuseriyon se kaho chorr dain bazid hona
Qabool kaise karay ga wo lam yalid hona
Jisay naseeb ho beta Hussain ke jaisa
Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa

Sikha gayi hain zamany ko sani e Zehra
Yehi aqeeda hay Mukhtar aur Takallum ka
Kahan hay wird koi Ya Hussain ke jaisa
Kahan se laye gi dunya Hussain ke jaisa

کہاں سے لائے گی دنیا حسینؑ كے جیسا 
فقط حسینؑ ملے گا حسینؑ كے جیسا 

عبادتوں کا تو جاری ہے سلسلہ اب تک 
نماز کو تو نمازی نہیں ملا اب تک 
کرے جو خاک پہ سجدہ حسینؑ كے جیسے 
کہاں سے لائے گی دنیا حسینؑ كے جیسا 

خدا بھی ناز کرے فخرِ عالمین بنے 
ہے اس رسولؐ کا حق شاہ مرسلین بنے 
ہے جس نبیؐ کا نواسہ حسینؑ كے جیسا 
کہاں سے لائے گی دنیا حسینؑ كے جیسا 

فضیلتیں جو کوئی کربلا کی پوچھے گا 
مجھے یقین ہے کعبہ جواب یہ دے گا 
نہیں کسی کا بھی روزہ حسینؑ كے جیسا 
کہاں سے لائے گی دنیا حسینؑ كے جیسا 

دلیر مان رہی ہیں شجاعتیں تم کو 
سلام کرتی ہیں اصغرؑ شہادتیں تم کو 
ہے چھہ مہینے میں جذبہ حسینؑ كے جیسا 
کہاں سے لائے گی دنیا حسینؑ كے جیسا 

خدا ہی جانے كہ عباسؑ کیا ہے شان تیری 
یہ منزلت یہ سعادت کسے نصیب ہوئی
تجھے سمجھتی ہیں زہراؑ حسینؑ كے جیسا 
کہاں سے لائے گی دنیا حسینؑ كے جیسا 

شکست کس کی ہے میدان میں فیصلہ کر لے 
دلیل چھوڑ دے آ جا مباہلہ کر لے 
ہے تیرے پاس تو لے آ حسینؑ كے جیسا 
کہاں سے لائے گی دنیا حسینؑ كے جیسا 

یہ صرف خط نہیں تحریر ہے مقدر کی 
حبیب تم پہ عنایت ہوئی ہے سرورؑ کی 
تمہیں بلاتا ہے مولا حسینؑ كے جیسا 
کہاں سے لائے گی دنیا حسینؑ كے جیسا 

فصیریوں سے کہو چھوڑ دین بضد ہونا 
قبول کیسے کرے گا وہ لم یلد ہونا 
جسے نصیب ہو بیٹا حسینؑ كے جیسا 
کہاں سے لائے گی دنیا حسینؑ كے جیسا 

سکھا گئی ہیں زمانے کو ثانءِ زہراؑ
یہی عقیدہ ہے مختار اور تکلم کا 
کہاں ہے وِرد کوئی یا حسینؑ كے جیسا 
کہاں سے لائے گی دنیا حسینؑ كے جیسا