Dam badam Ali Ali pukaar
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Dam badam Ali Ali pukaar
Har qadam Ali Ali pukaar
Tere soonay aangan me khelegi bahaar

Dar badar bhathakne ka kyun ye rog paala hay
Sab ke sab bhikaari hain kon dene waala hay
Un se maang unton ki dede jo qataar

Paak hay lahu kis ka kis me kya kharaabi hay
Kon hay saqifaayi kon buturaabi hay
Pal me sab ke chehron se hoga aashkaar

Aal ki taraf gar tu ek qadam barhaayega
Das qadam zamaane se khud ko aage paayega
Kyun ke ye nahi rakhte kisi ka udhaar

Ranj o gham ki raahon me bad hawaas betha hay
Chal Ali ki chokhat par kyun udaas betha hay
Bas palak jhapakte hi hoga beraa paar

Naame faatahe khaibar gar tera vazifa hay
Dur hogi har mushkil ye hamaara daava hay
Khaali jaa nahi sakta tera koyi baar

chaahta hay gar tujhse sayyada bhi raazi ho
Khush ho khaaliqe akbar mustafa bhi raazi ho
Munkiraane haidar pe karde beshumaar

Tujhko fatema zehra ki duaayein mil jaaye 
Khud teri ziyaarat ko ambiya chale aayein
Karbala pahonch jaaye tu jo ek baar

Adl aur adaalat ka intezaam lene ko
Karbala ka ay nayaab inteqaam lene ko
Aane waala hay koyi leke zulfiqaar

دم بہ دم علیؑ علیؑ پکار
ہر قدم علیؑ علیؑ پکار
تیرے سُونے آنگن میں کیھلے گی بہار
دم بہ دم علیؑ علیؑ پکار

در بدر بھٹکنے کا کیوں یہ روگ پالا ہے
سب کے سب بھکاری ہیں کون دینے والا ہے
اُن سے مانگ اونٹون کی دے دے جو قطار
دم بہ دم علیؑ علیؑ پکار

پاک ہے لہو کس کا کس میں کیا خرابی ہے
کون ہے سقیفائی کون بوترابی ہے
پل میں سب کے چہروں سے ہوگا آشکار
دم بہ دم علیؑ علیؑ پکار

آل کی طرف گر تُو اِک قدم بڑھائے گا
دس قدم زمانے سے خود کو آگے پائے گا
کیوں کہ یہ نہیں رکھتے کسی کا اُدھار
دم بہ دم علیؑ علیؑ پکار

رنج و غم کی راہوں میں بد حواس بیٹھا ہے
چل علیؑ کی چوکھٹ پر کیوں اداس بیٹھا ہے
بس پلک جھپکتے ہی ہوگا بیڑا پار
دم بہ دم علیؑ علیؑ پکار

نامِ فاتحِ خیبر گر تیرا وظیفہ ہے
دُور ہوگی ہر مشکل یہ ہمارا دعویٰ ہے
خالی جا نہیں سکتا تیرا کوئی بار
دم بہ دم علیؑ علیؑ پکار

چاہتا ہے گر تجھ سے سیدہؑ بھی راضی ہوں
خوش ہو خالقِ اکبر مصطفیٰؐ بھی راضی ہوں
منکرانِ حیدرؑ پہ کر دے بے شمار

تجھ کو فاطمہ زہراؑ کی دعائیں مل جائیں
خود تیری زیارت کو انبیاء چلے آئیں
کربلا پہنچ جائے تُو جو اِیک بار

عدل اور عدالت کا انتظام لینے کو
کربلا کا اے نایاب انتقام لینے کو
آنے والا کوئی ہے لے کے ذوالفقار