Kabay ke sardar ab to aa jao
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

کعبہ کے سردار اب تو آجاؤ
حیدری ورثہ دار اب تو آجاؤ

جس کی ضربت ساری عبادت سے اعلی
جس نے مرحب کو دو ٹکڑے کر ڈالا
لے کر وہ تلوار اب تو آجاؤ

کعبہ کے سردار اب تو آجاؤ

پھر سے اکھٹی ہونے لگی ہے فوج یزید
اس سے پہلے ظلم کوئ ہو ہم پہ مزید
ظلم پہ کرنے وار اب تو آجاؤ

کعبہ کے سردار اب تو آجاؤ

کرب و بلا ہو سامراہ ہو یا کہ نجف
گونج رہا ہے ایک ہی نعرہ چاروں طرف
آجاؤ سرکار اب تو آجاؤ

کعبہ کے سردار اب تو آجاؤ

اپنے لہو سے کی ہے جنہوں نے مدد
سوگئے اوڑھ کے خاک شفا جو زیر لحد
ان کو کرنے پیار اب تو آجاؤ

کعبہ کے سردار اب تو آجاؤ

کون و مکاں میں لہرانے غازی کا علم
رائج کرنے دستور مجلس ماتم
شاہ کے پرسہ دار اب تو آجاؤ

کعبہ کے سردار اب تو آجاؤ

نور دیا ہے خالق نے ان میں جب سے
تیری دید کی خاطر اے مولا تب سے
آنکھیں ہیں بیدار اب تو آجاؤ

کعبہ کے سردار اب تو آجاؤ

ٹوٹے دل سے میر حسن کرتا ہے دعا
راہ تمہاری دیکھ رہی ہے کرب و بلا
نرجس کے دلدار اب تو آجاؤ

کعبہ کے سردار اب تو آجاؤ