Dono aalam ki shahzadi se aaj shere Khuda ki shaadi hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Dono aalam ki shahzadi se
Aaj shere khuda ki shaadi hay

Aaj ismat se mil gayi ismat
Ya tahaarat mili tahaarat se
Chehra Quraan ka ho gaya roshan
Mili aayat jo apni surat se
Malkae innama bani hai dulhan
Waarise hal ataa ki shaadi hay

Is taraf ismaton ka hai kangan
Us taraf joshni me joshan hay
Kyun mashiat na fakhr se jhume
Jaisa dulha hai waisi dulhan hay
Binte uqda kusha ka aqd hai aaj
Aaj mushkil kusha ki shaadi hay

Saari hurein mili kanizi me
Saare ghilmaan mile ghulaami ko
Jannatein khalq kardi qudrat ne
Binte ehmad teri salaami ko
Arsh ta farsh sab jahez me hain
Khud razaaye khuda ki shaadi hay

Aayaton ne sajaayi hai toli
Sadqe jibreel ne utaare hain
Har guluband aaj naade ali
Aur hadison ke goshware hain
Har tasbih kyun na hojaaye
Hazrate sayyada ki shaadi hay

Hai shabe qadr si baraat ki shab
Eid ke din sa din hai shaadi ka
Har milan shaahzaada e kul se
Aaj jannat ki shaahzaadi ka
Jo tchuraayegi naar se ham ko
Aaj us Fatima ki shaadi hay

دونوں عالم کی شاہزادیؑ سے
آج شیرِ خدا کی شادی ہے

آج عصمت سے مل گئی عصمت
یا طہارت ملی طہارت سے
چہرہ قرآں کا ہو گیا روشن
ملی آیت جو اپنی سورہ سے
ملکہءِ انّما بنی ہے دلہن
وارثِ ہل عطا کی شادی ہے

اِس طرف عصمتوں کا ہے کنگن
اُس طرف جوشنی میں جوشن ہے
کیوں مشیعت نہ فخر سے جھومے
جیسا دولہا ہے ویسی دلہن ہے
بنتِ عقدہ کشاء کا عقد ہے آج
آج مشکل کشاء کی شادی ہے

ساری حوریں ملی کنیزی میں
سارے غلماں ملے غلامی میں
جنّتیں خلق کردیں قدرت نے
بنتِ احمدؐ تیری سلامی کو
عرش تا فرش سب جہیز میں ہیں
خود رضائے خدا کی شادی ہے

آیتوں نے سجائی ہے ڈولی
صدقے جبریل نے اُتارے ہیں
ہر گلوبند آج نادِعلیؑ 
اور حدیثوں کے گوشوارے ہیں
ہر تسبیح کیوں نہ ہو جائے
حضرتِ سیدہ کی شادی ہے

ہوئی شبِ قدر سی بارات کی شب
عید کے دن سا دن ہے شادی کا
ہر ملن شہزادہء کل سے
آج جنت کی شہزادی کا
جو چھڑائے گی نار سے ہم کو
آج اُس فاطمہؑ کی شادی ہے