Haq se kabhi mahroom jo haqdaar na hote
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

حق سے کبھی محروم جو حق دار نہ ہوتے
دُنیا میں کہیں ظلم كے آثار نہ ہوتے

جینے كے ہمارے کوئی آثار نہ ہوتے 
گر خاکِ شفاء ہم تیرے بیمار نہ ہوتے 

کرتا نہ خدا عشق اگر آلِ نبیؑ سے 
اُن کے لیے آیات كے انبار نہ ہوتے 

اک بار جو کہہ دیتا علیا ولی اللہ 
اے شیخ حرم حج تیرے بیکار نہ ہوتے 

زہراؑ کی قسم جسم سے کر دیتا الگ میں
ماتم كے لیے ہاتھ جو تیار نہ ہوتے 

اسلام کو جم کر کبھی چلنا نہیں عطا 
گر اصغرِؑ بے شیر مددگار نہ ہوتے 

ہوتا ہی نہیں عابد و معبود میں پردہ 
معراج میں گر حیدر کرارؑ نہ ہوتے 

بستر پہ نبیؐ كے بجُز حیدرؑ کوئی صاحب 
سوتے بھی اگر پِھر کبھی بیدار نہ ہوتے 

ہوتے نہیں سلمان کبھی فخرِ سلیمان 
گر فاطمہ زہراؑ كے نمک خوار نہ ہوتے 

سوچو تو ذرا حشر میں برزخ میں لحد میں 
کیا ہوتا اگر حیدرِ کرارؑ نہ ہوتے 

عباسؑ کو مل جاتی اِجازَت تو ستم گار 
اِس پار تو کیا نہر كے اُس پار نہ ہوتے

رہتا ہی نہیں عابد و معبود میں پردہ
معراج میں گر حیدرِ کرارؑ نہ ہوتے

Haq se kabhi mahroom jo haqdaar na hote..
Duniya me kaheen zulm ke aasar na hote..

Jeenay ke hamare koi aasar na hote
Gar khake shifa hum tere beemar na hote

Karta na Khuda ishq agar aale nabi se
Inke liye ayaat ke ambaar na hote

Ek baar jo keh deta Aliyun waliyullaah
Ae shaikh e haram haj teray bekaar na hote

Zahra ki qasam jism se kar deta alag may
Matam ke liye hath jo taiyar na hote

Islam ko jam kar kabhi chalna nahi ata
Gar Asghar e besheer madadgar na hote

Hota hi nahi aabido mabood me parda
Meraj me gar Haidar e karrar na hote

Bistar pe Nabi ke bajuz Haidar koi sahab
Sote bhi agar phir kabhi bedar na hote

Hote nahi Salman kabhi fakhre Sulaiman
Gar Fatema Zahra ke namak-khar na hote

Socho to zara hashr me barzakh me lahad me
Kya hota agar Haidare karrar na hote

Abbas ko mil jati ijazat to sitamgar
Is par to kya nehr ke us paar na hote