Qaid may waris-e-Kazim ne shahadat payee
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

قـــید میں وارث کاظـــــــمؑ نے شہــــــادت پائی

قید میں مــــولا تـقـیؑ شــام و ســحر روتے تھے
روکــتے بھی تھے نگــــــــہبان مگـــــر روتے تھے
یادِ شبــــــیرؑ میں جب پیٹ کے ســــر روتے تھے
در و دیوار کا پھٹتــــــا تھــــا جــــــــــگر روتے تھے

مرتے مرتے بھی زباں پر شــــہہ صفــدرؑ ہی رہے
مـــــــدت قـــــید میں عــــــــــابدؑ کے برابر ہی رہے
اُن کے رونے سے ہزاروں کا جــگر نــرم ہوا
مـعـتـصــم پہلے ہی جـــــلتا تھـــــا پر اب اور جــلا

مـــــل کے دربان سے آخــــــــر وہ اُنھــــیں زہر دیا
جــس کے پیتے ہی کلیجے میں گـــڑا تیر قضـا
کچھ وصــیت کے بھی لکھنے کی نہ مہلت پائی
قـــید میں وارث کاظــــــــــمؑ نے شہــــــادت پائی

کـــــون زندان میں اپنـــــا تھـــــا جـــــو اِن کو روتا
بے کسی لاشـــــہء مظلـــــوم پہ کرتی تھی بکا
نـــــو بزرگ آپ کے فردوس میں کرتے تھے عـــزاٴ
ایک بی بی کی یــاں آئـــی یہ پر درد صــــــدا

لاش پر رونے کو بیٹـــــا، نہ کــوئی بھــــــائی ہے
ھـائے بچے تجھے غـــــربت میں اجـــــل آئی ہے

یاں نہ مادر ہے، نہ بی بی ہے، نہ بیٹی، نہ بہن
لاش کو ڈھــــانکنے والا نہ کـــوئی مـــــرد، نہ زن
اب یہ زندان کے نگـــہبان کا ہے دل دوز ســـــخن
تھا وہ طـــــفل مدنی جس نے دیا غســل و کفن

سـب نےدیکھا کہ وہ یوں پیٹ کے ســــر روتا ہے
جـس طرح باپ کے مــــــــــاتم میں پسر روتا ہے
قـــــبر اطہر میں اتاری گئی جب نعــــش امـــــام
نـــــور سے ہو گئی روشـــــن لـــــحد پاک تمــام

پھـــــر کیا روکے کہیں سے اُســی بی بی نے کلام
رونے والے مرے شـــــبیرؑ کے تجھ پر ہو ســـــلام
خُـــــلد سے ســـــارے بزرگوں کو یہاں لائی ہے
دفـــــن کرنے تـــــری مـــــیت کو بتـــــول آئی ہے