Sakina (s.a) Soja
Efforts: Syed Razi

Kehte the Aabide beemar Sakina soja,
Ab nahi ayenge baba meri behna soja.

Gaal zakhmi hain jabeen zakhmi hai seena zakhmi,
Pusht zakhmi hai gala zakhmi sarapa zakhmi,
Aesi haalat me zari dayr Sakina soja.

Jaanta Hun Mai tujhe neend nahi aayegi,
Khaak par sone ki aadath tujhe hojayegi,
Ab milega na tujhe baap ka seena soja.

Raath bhar aaos ki chaadar me tera sar hoga,
Dhoop ka odhna din bhar tere tan par hoga,
Ab hai tere liye mitti ka bichona soja.

Tere kaano se tapakte hain lahu ke qatre,
Phat raha hai mera dil shore buka se tere,
Shimr aajayena phir ae meri behna soja.

Kab talak roegi tu yaade padar me Bibi,
Shabe aashoor se hi jaagi hui hai tu bhi,
Maa ki aaghosh me ae jaane khareena soja.

Dekh kar udhte parindon ko tu roti kyun hai,
Yaade asghar me behen jaan ko khoti kyun hai,
Jald hi jaayenge hum log madeena soja.

Kyun na barsayen Razi aur Mujeeb aankh se khoon,
Bole sajjad ke shayed tujhe miljaye sukoon,
Aa mere seene pe kuch dayr Sakina soja.

کہتے تھے عابد بیمار سکینہ سوجا
اب نہیں آینگے بابا میری بہنا سوجا

گال زخمی  ہیں جبیں زخمی ہے سینہ زخمی
پشت زخمی ہے گلہ زخمی سراپا زخمی
ایسی حالت میں زری دیر  سکینہ سوجا

جانتا ہوں میں تجھے نیند نہیں آیگی
خاک پر سونے کی عادت تجھے ہوجایگی
اب ملیگا نہ تجھے باپ کا سینہ سوجا

رات بھر اوس کی چادر میں تیرا سر ہوگا
دھوپ کا اوڑھنا دن بھر تیرے تن پر ہوگا
اب ہے تیرے لئے مٹی کا بچھونا سوجا

تیرے کانوں سے ٹپکتے ہیں لہو کے قطرے
پھٹ رہا ہے میرا دل شور بکا سے تیرے
شمر آجاۓ نہ پھر اے میری بہنا سوجا

کب تلک روے گی تو یاد پدر میں بی بی
شب عاشور سے ہی جاگی ہوئی ہے تو بھی
ماں کی آغوش میں اے جان خرینہ سوجا

دیکھکر  اڑتے پرندوں کو تو روتی کیوں ہے
یاد صغرا میں بہن جان کو کھوتی کیوں ہے
جلد ہی جاینگے ہم لوگ مدینہ سوجا

کیوں نہ برسایں رضی اور مجیب آنکھ سے خوں
بولے سجاد کہ شاید تجھے مل جاۓ سکوں
آ میرے سینے پہ کچھ دیر  سکینہ سوجا