Naam hay mera Sakina may hoon bint e Shabbir
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Naam hay mera Sakina may hoon bint e Shabbir
Qalam e Noor se likhkhi gayi meri taqdeer
Meray baba ki zamanay may nahi koi nazeer
Wo hain Quran e mubeen aur may un ki tafseer
Fakhr is baat pe hay bar sar e seena may hoon
Sabr e Sarwar ki angoothi ka nageena may hoon

Meray baba hain Hussain aur hain dada Haider
Dadi Zehra hain to nama hay shafi e mehshar
Bhai Sajjad hain Akbar bhi hain aur hain Asghar
Aik Abbas to hain doosray Ammo Shabbar
Karbala meri Najafa mera Madina mera
Mukhtasar ye hay ke hay naam Sakina mera

Fazila may hoon fazeal bhi fazeelat may hoon
Hoon karam may kareema bhi karamat may hoon
Shah e konain ke baitay ki zaroorat may hoon
Aur ziarat meri Shabbir ki baz-at may hoon
May bhi bigrri hui taqdeer bana sakti hoon
Apni thokar se may murday ko jila sakti hoon

Aaj har doar ke zaalim ko mitanay ke liye
Zulm ko sabr ki tasweer dikhanay ke liye
Nehr se foaj sitamgar ki bhaganay ke liye
Umar e Saad ki auqat batanay ke liye
Sura e Azm se ik harf e jali laayi hoon
Sath Abbas ke may Naad e Ali laayi hoon

Andheron ko kabhi noor na samjha jaye
Bas ham martaba e Toor na samjha jaye
Roz e mehshar ko bohat door na samjha jaye
Go ke pyasi hoon par majboor na samjha jaye
Aik bhi lamha na guzray ke yaheen par aaye
May agar chahoon to Kausar bhi zameen par aaye

Takht hilnay laga urrnay laga darbar ka rang
Ungliyan munh may dabaye huay sab log hain dang
Marka Uhad ka yaad aaya kabhi Badr ki jang
Misl Marhab ke na kyun zair ho har aik dabang
Dil hoon Zainab ka to Sarwar ki chaheeti hoon may
Aur Abbas e Dilawar ki bhateeji hoon may

Aey baba mujh ko ruswa sar e darbar kiya jata hay
Zakhm ik aur naya mujh ko diya jata hay
Baap ke baad kia is tarha kia jata hay
Imtehaan meri muhabbat ka liya jata hay
Tasht se uth ke meri goad may aao baba
Tum ho zinda ye zamanay ko batao baba

Uth ke Shabbir ka sar goad may aaya jis dam
Ye kaha bali Sakina ne ke aey ibn e sitam
Bol ab bol barrha apni khitabat ka qadam
Tu kia bolay ga ke sab toot gaya tera bharam
Ghoar se sun ke najasat ka unwan hay tu
Kal bhi shaitan tha aur aaj bhi shaitan hay tu

Koi keh day mera bhai Ali Asghar roya
Hurmala roya teri foaj ka afsar roya
Teer bhi roya talwar bhi khanjar roya
Zikr ik do ka nahi sara hi lashkar roya
Ik tabassum se teri foaj ko wo maar gaya
Jang cheh maah ke besheer se tu haar gaya

Ibn e sufyan hay robah ki khaslat tujh may
Ghair mumkin hay nazar aaye sharafat tujh may
Ghar banaye hay zamanay ki najasat tujh may
Rok lena jo zara si bhi ho himmat tujh may
Aaj tabdeel har ik samt ka mausam ho ga
Teray darbar may Shabbir ka matam ho ga

Farsh e majlis meri khawhish se bichaye rakhna
Dooriya dishman e Sarwar se banaye rakhna
Tazia sar pe alam dil se lagaye rakhna
Apni palkon pe sada ashk sajaye rakhna
Kon kehta hay ke batil hain tumharay ansoo
Khuld may rekhnay ke qabil hain tumharay ansoo

Aey museebat ke giraftar pareshan na ho
Khak ho jayain gay sab khaar pareshan na ho
Hoon gay sab raastay hamwar pareshan na ho
Meray baba ke azadar pareshan na ho
Behr e imdad teray paas chalay aayain gay
De mera waasta Abbas chalay aayain gay

Aey sharar haq he ke poochon ye sharafat kaisi
Dushman e aal e Payambar se ye ulfat kaisi
Jo nahi in ko to phir us se muhabbat kaisi
Sabr walon ko bhala zulm se raghbat kaisi
Aey azadaron najis khoon pe lanat bhaijo
Bas ye guzarish hay ke maloon pe lanat bhaijo

نام ہے میرا سكینہ مئى ہوں بنت شبیر 
قلمِ نور سے لکھی گئی میری تقدیر 
میرے بابا کی زمانے میں نہیں کوئی نزیر 
وہ ہیں قرآن مبین اور میں ان کی تفصیر 
فخر اِس بات پہ ہے بر سَر سینہ میں ہوں 
صبر سرورؑ کی انگوٹھی کا نگینہ میں ہوں 

میرے بابا ہیں حسینؑ اور ہیں دادا حیدرؑ
دادی زہراؑ ہیں تو نامہ ہے شفیعِ محشر 
بھائی سجادؑ ہیں اکبرؑ بھی ہیں اور ہیں اصغرؑ
ایک عباسؑ تو ہیں دوسرے عمّو شبرؑ
کربلا میری نجف میرا مدینہ میرا 
مختصر یہ ہے كہ ہے نام سكینہؑ میرا 

فاضلہ میں ہوں فضائل بھی فضیلت میں ہوں 
ہوں کرم میں کریمہ بھی كرامت میں ہوں 
شاہِ کونینؑ كے بیٹے کی ضرورت میں ہوں 
اور زیارت میری شبیرؑ کی بضعت میں ہوں 
میں بھی بگڑی ہوئی تقدیر بنا سکتی ہوں 
اپنی ٹھوکر سے میں مردے کو جِلا سکتی ہوں 

آج ہر دور كے ظالم کو مٹانے كے لیے 
ظلم کو صبر کی تصویر دکھانے كے لیے 
نحر سے فوج ستمگر کی بھگانے كے لیے 
عمر سعد کی اوقات بتانے كے لیے 
سورۃِ عزم سے اک حرف جلی لائی ہوں 
ساتھ عباسؑ كے میں نادِ علیؑ لائی ہوں 

اندھیروں کو کبھی نور نہ سمجھا جائے 
بس ہَم مرتبہءِ طور نہ سمجھا جائے 
روز محشر کو بہت دور نہ سمجھا جائے 
گو كے پیاسی ہوں پر مجبور نہ سمجھا جائے 
ایک بھی لمحہ نہ گزرے كہ یہیں پر آئے 
مئى اگر چاہوں تو کوثر بھی زمین پر آئے 

تخت ہلنے لگا اڑنے لگا دربار کا رنگ 
انگلیاں منه میں دبائے ہوئے سب لوگ ہیں دنگ 
معرکہ احد کا یاد آیا کبھی بدر کی جنگ 
مثلِ مرحب كے نہ کیوں زیر ہو ہر ایک دبنگ 
دِل ہوں زینبؑ کا تو سرورؑ کی چہتیی ہوں میں
اور عباسؑ دلاور کی بھتیجی ہوں میں

----------------------------------------
اے بابا !! مجھ کو رسوا سَر دربار کیا جاتا ہے 
زخم اک اور نیا مجھ کو دیا جاتا ہے 
باپ كے بعد کیا اِس طرح کیا جاتا ہے 
امتحاں میری محبت کا لیا جاتا ہے 
طشت سے اٹھ كے میری گود میں آؤ بابا 
تم ہو زندہ یہ زمانے کو بتاؤ بابا 

اٹھ كے شبیرؑ کا سَر گود میں آیا جس دم 
یہ کہا بالی سكینہؑ نے كے اے اِبن ستم 
بول اب بول بڑھا اپنی خطابت کا قدم 
تو کیا بولے گا كے سب ٹوٹ گیا تیرا بھرم 
غور سے سُن كے نجاست کا عنوان ہے تو 
کل بھی شیطان تھا اور آج بھی شیطان ہے تو 

کوئی کہہ دے میرا بھائی علی اصغر رویا 
حرملا رویا تیری فوج کا افسر رویا 
تیر بھی رویا تلوار بھی خنجر رویا 
ذکر اک دو کا نہیں سارا ہی لشکر رویا 
اک تبسم سے تیری فوج کو وہ مار گیا 
جنگ چھہ ماہ كے بے شیر سے تو ہار گیا 

اِبن سفیان ہے روباہ کی خصلت تجھ میں
غیر ممکن ہے نظر آئے شرافت تجھ میں
گھر بنائے ہے زمانے کی نجاست تجھ میں
روک لینا جو ذرا سی بھی ہو ہمت تجھ میں
آج تبدیل ہر اک سمت کا موسم ہو گا 
تیرے دربار میں شبیرؑ کا ماتم ہو گا 

فرشِ مجلس میری خواہش سے بچھائے رکھنا 
دوریاں دشمنِ سرورؑ سے بنائے رکھنا 
تازیہ سَر پہ علم دِل سے لگاے رکھنا 
اپنی پلکوں پہ صدا اشک سجائے رکھنا 
کون کہتا ہے كہ باطل ہیں تمہارے آنسو 
خلد میں رکھنے كے قابل ہیں تمہارے آنسو 

اے مصیبت كے گرفتار پریشان نہ ہو 
خاک ہو جائیں گے سب خار پریشان نہ ہو 
ہوں گے سب راستے ھموار پریشان نہ ہو 
میرے بابا كے عزادار پریشان نہ ہو 
بہر امداد تیرے پاس چلے آئیں گے 
دے میرا واسطہ عباسؑ چلے آئیں گے 

اے شرر حق ہے كہ پوچھو یہ شرافت کیسی 
دشمن آل پیمبرؑ سے یہ الفت کیسی 
جو نہیں اِن کو تو پِھر اُس سے محبت کیسی 
صبر والوں کو بھلا ظلم سے رغبت کیسی 
اے عزادارو نجس خون پہ لعنت بھیجو
یہ گزارش ہے كہ ملعون پہ لعنت بھیجو