Shah e Khurasaan
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

شاہِ خراساں
مشہد کے والی سارا جہاں تیرے در کا سوالی
شاہِ خراساں

کوئی سوالی دربار سے تیرے لوٹا نہ خالی
شاہِ خراساں

تو بھی علیؑ کے جیسا ولی ہے
وہ بھی سخی تھے تو بھی سخی ہے
تو نے کسی بھی سائل کی کوئی
عرضی نہ ٹالی
شاہِ خراساں

دنیا کہے گی اُسکو تونگر
بانٹے گا جنت بہلول بن کر
اک بار جس نے والیءِ مشہد سے
خیرات پا لی
شاہِ خراساں

آئیں فرشتے بن کر گداگر
بے زور یاں پر بنتے ہیں بوذر
دونوں جہاں میں دربار تیرا ہے
ایسا مثالی
شاہِ خراساں

حاصل ہو مولاؑ یہ بھی سعادت
مجھ کو عطا ہو اذنِ زیارت
آنکھوں سے اپنی چوموں تمہارے
روضے کی جالی
شاہِ خراساں

اُن وادیوں میں ہم ہو گئے گم
راضی تھی مجھ سے معصومہءِ قمؑ
ہم اہلِ دل نے مشہد پہنچ کر
جنت کما لی
شاہِ خراساں

دل سے سہیل اِس در پر جھکا سر
تیرا بھی بن جائے گا مقدر
اِس آستاں سے کِتنوں نے اپنی
بگڑی بنا لی
شاہِ خراساں

Shah e Khurasaan

Mashhad ke waali sara jahan teray dar ka sawali
Shah e Khurasaan

Koi sawali darbar se teray lota na khali
Shah e Khurasaan

Tu bhi Ali ke jaisa wali hay
Wo bhi sakhi thay, tu bhi sakhi hay
Tu ne kisi bhi saael ki koi
Arzi na taali
Shah e Khurasaan

Dunya kahay gi us ko tawangar
Bantay ga jannat, Behlol ban kar
Ik baar jis ne, waali e Mashhad se
Khairat paa li
Shah e Khurasaan

Aayain farishtay ban kar gadagar
Be zar yaan par bantay hain boozar
Dono jahan may, darbar tera hay
Aisa misali
Shah e Khurasaan

Hasil ho Maula ye bhi sa-aadat
Mujh ko ata ho izn e ziarat
Ankhon se apni, choomo tumharay
Rozay ki jaali
Shah e Khurasaan

Un wadiyon may ham ho gaye gum
Razi theen mujh se Masooma e Qum
Ham ahl e di ne Mashhad pohonch kar
Jannat kama li
Shah e Khurasaan

Dil se Sohail is dar pe jhuka sar
Tera bhi ban jaaye ga muqaddar
Is aastan se, kiton ne apni
Bigrri bana li
Shah e Khurasaan