Gar ho meri hayaat mere ikhtiyaar me
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Gar ho meri hayaat mere ikhtiyaar me
Sadiya guzaar du mai tere intezaar me
Maula ab ap pardae ghaibat uthaiye
Do din toh zindagi k guzaru bahaar me

Is waqt gar che adl se khali zameen hai
Mazlum ke makaan me zaalim makeen hai
Duniya sitam shaar hay maghloob deen hai
Maula zaroor aayain gay mujhko yakeen hai
Aaegi kuch kami na mere aitbaar me

sab log khwahishat ke ab ho gaye ghulam
iblisiyat ka daur hai bepardagi hai aam
peene lage lahu hai toh khane lage haraam
kehta hai dil k bas abhi aa jaiye imam
gar der hai mashiyate parwardigar me

mushkil ke waqt humne pukara hai ya hussain
ghaybat k imtehaan me sahara hai ya hussain
qurano ahlebait ka paara hai yaa hussain
haq ne humare dil pe utara hai yaa hussain
rehkar duae binte nabi k hisaar me

is daure pur khatar me hain dushwaar manzile
maula is imtehan me dil ko sukoon mile
roza namazo haj k manasib ada kare
hum shamo karbala ki ziyarat ko jaa sake
aa jaega karaar dile be karaar me

khudkush hai bumdamakhe hade zulmo jaur hai
kuch samne hai aur pase manzar kuch aur hai
ab bhi yazidiyat k mazaalim ka daur hai
gar che yeh momineen pe mushkil ka daur hai
duniya ke dardo gam hai bhala kis shumar me

ahle aza ko jurrato tatbeer chahiye
dekha hai khwaab khwaab ki taabeer chaye
taskeene kalbe maadare shabbir chaye
ab jannatul baqi ki taameer chaye
aa jaaegi bahaar is ujde gayaar me

alfaaz se dilo pe hukumat mili mujhe
mazloom yeh hussain se taakat mili mujhe
mimbar mila hussain ka izzat mili mujhe
badle me ek ashk k jannat mili mujhe
ghaata kabhi hu nai is kaarobar me

dar par tumhare hote hai har roz maujize
kitne ameer ho gae is dar ki bheek se
sab apne apne hisse ki khairaat le gae
zikre imame asr me hissa qamar mile
mai mutmain hu mai b khada hu kataar me

گر ہو میری حیات میرے اختیار میں 
صدیاں گزار دون میں تیرے انتظار میں 

مولا اب آپ پردہءِ غیبت اُٹھائے 
دو دن تو زندگی کے گزاروں بہار میں 

اِس وقت گر چہ عدل سے خالی زمین ہے 
مظلوم کے مکان میں ظالم مکین ہے 

دُنیا ستم شعار ہے مرغوب دین ہے 
مولا ضرور آئیں گے مجھکو یقین ہے 

آئیگی کچھ کمی نہ میرے اعتبار میں 
سب لوگ خواہشات كے اب ہو گئے غلام 

اِبْلِیسِیَّت کا دور ہے بے پردگی ہے عام 
پینے لگے لہو ہیں تو کھانے لگے حرام 

کہتا ہے دِل کہ بس ابھی آ جائیے امامؑ
گر دیر ہے مشیتِ پروردگار میں 

مشکل كے وقت ہم نے پکارا ہے یا حسینؑ 
غیبت کے امتحاں میں سہارا ہے یا حسینؑ 

قرآن و اہلبیت کا پارہ ہے یا حسینؑ 
حق نے ہمارے دِل پہ اتارا ہے یا حسینؑ 

رہ کر دعائے بنتِ نبیؑ کے حصار میں 
اِس دورِ پر خطر میں ہیں دشوار منزلیں 

مولا اِس امتحان میں دِل کو سکوں ملے 
روزہ نماز و حج کے مناسک ادا کریں

ہم شام و کربلا کی زیارت کو جا سکیں
آ جائیگا قرار دلِ بے قرار میں 

خودکش ہے بم دھماکے حدِ ظلم و جور ہے 
کچھ سامنے ہے اور پسِ منظر کچھ اور ہے 

اب بھی یزیدیت کے مظالم کا دور ہے 
گر چہ یہ مومنین پہ مشکل کا دور ہے 

دُنیا كے درد و غم ہیں بھلا کس شمار میں 
اہل عزا کو جرات و تدبیر چاہیے 

دیکھا ہے خواب خواب کی تعبیر چاہیے 
تسکینِ قلبِ مادرِ شبیرؑ چاہیے 

اب جنت البقی کی تعمیر چاہیے 
آ جائے گی بہار اِس اجڑے دیار میں 

الفاظ سے دلوں پہ حکومت ملی مجھے 
مظلوم یہ حسینؑ سے طاقت ملی مجھے 

منبر ملا حسینؑ کا عزت ملی مجھے 
بدلے میں ایک اشک کے جنت ملی مجھے 

گھاٹا کبھی ہوا نہیں اِس کاروبار میں 
دَر پر تمھارے ہوتے ہے ہر روز معجزے

کتنے امیر ہو گئے اِس دَر کی بھیک سے 
سب اپنے اپنے حصے کی خیرات لے گئے

ذکرِ اماِ عصرؑ میں حصہ قمر ملے 
میں مطمئن ہوں میں بھی کھڑا ہوں قطار میں