Chandni raat may umeedon ke deep jalayey tum nahi aaye
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



چاندنی رات میں امیدوں كے دیپ جلائے تم نہیں آئے 
سانس دھن سے باہر جھانکنے پل پل آئے تم نہیں آئے 

آنکھوں میں مایوسی درد کی جھیل كے اندر ڈوب رہی ہے 
موجِ اشک نے کتنے کاجل بہہ كے بہائے تم نہیں آئے 

-- جیون کی وادی میں دیکھو چاروں اوڑھ اندھیرا ہے 
کالی رات كے پیری بادل دِل پر چھائے تم نہیں آئے 

امیدوں كے سارے تارے روتے روتے سو گئے سارے 
جیون بیتا دروازے پر نظر جمائے تم نہیں آئے 

-- کتنے پھول دعاؤں كے سے میری زباں سے دِل نے مانگے 
تیری راہ پہ پھول لگا كے جتنے بچھائے تم نہیں آئے 

ہونٹوں پہ آہوں نے آ کر ایسے کتنی بار پکارا 
جیسے ماں کو روتے بیٹے دکھ میں بلائے تم نہیں آئے 

ان میں لاکھوں امیدوں کی سسکیاں بھرتیں قبریں دیکھو 
دھڑکن دھڑکن ہر آہٹ پر کان لگائے تم نہیں آئے 

درد و الم کی کتنی صدائیں روتے ہوئے دم توڑ چکی ہیں 
ہر دن سورج آس اُگائے آس مٹائے تم نہیں آئے 

کتنے بدلے تیری آس میں رکھے ہوئے ہیں صدیوں ہی سے 
عدل کی شمع تیری آس میں بجھتی جائے تم نہیں آئے

-- جعفر کرم الہی جذبے رات کی ڈھیر میں ڈھلتے جائیں 
جملہ دعاؤں کا رنگ پھیکا پڑتا جائے تم نہیں آئے

Chandni raat may umeedon ke deep jalayey tum nahi aaye
Saans dehan se bahar jhanknay pal pal aayey tum nahi aayey

Ankhon may mayoosi dard ki jheel ke andar doob rahi hay
Moj e ashk ne kitnay kaajal beh ke bahayey tum nahi aayey

-- Jeewan ki waadi may dekho charon aoorrh andhera hay
Kaali raat ke pairi baadal dil par chayey tum nahi aayey

-- Umeedon ke saray taray rotay rotay so gaye saray
Jeewan beeta darwazay par nazar jamayey tum nahi aayey

-- Kitnay phool duayon ke say meray zabaan ne dil ne mangay
Teri raah pe phool laga ke jitnay bichyey tum nahi aayey

Honton pe aahon ne aa kar aisay kitni baar pukara
Jaisay maa ko rotay baitay dukh may bulayey tum nahi aayey

In may lakhon umeedon ki siskiyan bhartay qabrain dekho
Dharrkan dharrkan har aahat par kaan lagayey tum nahi aayey

Dard o alam ki kitni sadyan rootay huay dam toarr chuki hain
Har din sooraj aas ugayey aas mitayey tum nahi aayey

Kitnay badlay teri aas may rak-khay huay hain sadyon hi se
Adl ki shamma teri aas may bujhti jayey tum nahi aayey

-- Jafer karm e ilahi jazbay raat ki dhair may dhaltay jayain
Jumla duayon ka rang pheeka parrta jayey tum nahi aayey