Jazba e ulfat e Sarkar may khat likhkha hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Jazba e ulfat e Sarkar may khat likhkha hay
Ik Shahanshah ko nadar ne khat likhkha hay

Is liye ashkon se likhkha ke ye zahir ho jaye
Shah e waala ke azadar ne khat likhkha hay

Apnay ajdad ke parham ko sambhalo aa kar
Katay hathon se alamdar ne khat likhkha hay

Dil se ye izzat o touqeer mubarak ho Habib
Aap ko Syed e Abrar ne khat likhkha hay

جذبہ الفت سرکار میں خط لکھا ہے 
اِک شہنساہ کو نادار نے خط لکھا ہے 

اِس لیے اشکوں سے لکھا كہ یہ ظاہر ہو جائے 
شاہ والا كے عزادار نے خط لکھا ہے 

اپنے اجداد كے پرچم کو سنبھالوں آ کر 
کٹے ہاتھوں سے علمدار نے خط لکھا ہے 

۔۔۔۔ تجھے کعبے کی
مسکراتی ہوئی دیوار نے خط لکھا ہے

ؑدِل سے یہ عزت و توقیر مبارک ہو حبیب 
آپ کو سید ابرارؑ نے خط لکھا ہے