Dil areeza e gham hay Ho sakay to aa jao
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

دل عریضہ غم ہے	  ہو سکے تو آ جاؤ 
انتظار پیہم ہے	ہو سکے تو آ جاؤ 

بے قراریاں اپنیی	روز بڑھتی جاتی ہیں 
بے کسی کا عالم ہے      ہو سکے تو آ جاؤ 

دِل سمٹ كے آنکھوں میں	آ گیا ہے اب اپنا 
اور آنکھ پر نم ہے  	   ہو سکے تو آ جاؤ 

دید کی تمنا میں	عمر گھٹتی جاتی ہے 
انتظار قائم ہے	ہو سکے تو آ جاؤ

Dil areeza e gham hay	Ho sakay to aa jao
Intezar payham hay	Ho sakay to aa jao

Beqararian apni		Roz barrhti jaati hain
Bekasi ka aalam hay	Ho sakay to aa jao

Dil simat ke aankon may	Aa gaya hay ab apna
Aur ankh pur nam hay	Ho sakay to aa jao

Deed ki tamanna may	Umr ghat-ti jaati hay
Intezar qayam hay	Ho sakay to aa jao