Ham dekhain gay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Badli se Chand nikalnay do 
Tab roshni ho gi taron may
Jab Fakhr e Khaleel aa jaye ga
Tab khailain gay phool angaroon may   Ham dekhain gay

Jab badal karr karr karrkain gay
Jab bijli cham cham chamkay gi
Bijli ki chamak dhoonday gi unhain
Jo log chuppay thay gharon may        Ham dekhain gay

Ik ham hi to hain jo dekhain gay
Ham dekhain gay

Husn e Yousuf yaad aayey ga
Jab khilqat un ko dekhay gi
Ham ne bhi Toor ko dekh liya
Ye ghul ho ga zawwaron may            Ham dekhain gay

Ik khusk shajar ki tehni par
Sab Fidak kay ghasib latkain gay
Tab phool ke shaida dekhain gay
Kuch khaar bhi hain gulzaron may      Ham dekhain gay

Ik ham hi to hain jo dekhain gay
Ham dekhain gay

Ja Kaabay may wo aayain gay
Tab Misr ko kon pukaray ga
Yousuf bhi nazar aayain gay wahan
Aey Maula teray beemaron may          Ham dekhain gay

Wo zulf ko jab lehrayain gay
Khud raat chuppay gi parday may
Rukh dekh ke chand bhi keh day ga
Kiya noor hay in rukhsaron may        Ham dekhain gay

Ik ham hi to hain jo dekhain gay
Ham dekhain gay

Tab Shimr o Umar ke hathon may
Rassi bandhwayi jayey gi
Kal tum ne haram ko phiraya tha
Ab tum bhi phiro bazaroon may         Ham dekhain gay

Qasim Abbas Ali Akbar
Ik takht pe sab baithay hoon gay
Jibreel bhi fakhr se bolain gay
Ye hain meray sardaron may            Ham dekhain gay

Aey Majid Shadman hoon gay ham
Jab lashkar may goonjay gi sada
Salman o Ammar o Buzar
Sab foaj ke hain salaron may          Ham dekhain gay

بدلی سے چاند نکلنے دو 
تب روشنی ہو گی تاروں میں
جب فخرِ خلیل آ جائے گا 
تب کھیلیں گے پھول انگاروں میں
ہَم دیکھیں گے 

جب بادل کڑ کڑ کڑکیں گے 
جب بجلی چم چم چمکے گی 
بجلی کی چمک ڈھونڈے گی انہیں 
جو لوگ چُپے تھے غاروں میں
ہم دیکھیں گے

اک ہَم ہی تو ہیں جو دیکھیں گے 
ہَم دیکھیں گے 

حُسْنِ یوسفؑ یاد آئے گا 
جب خلقت اُن کو دیکھے گی 
ہَم نے بھی طور کو دیکھ لیا 
یہ غل ہو گا زواروں میں
ہَم دیکھیں گے 

اک خشک شجر کی ٹہنی پر 
سب فدک کے غاصب گے 
تب پھول كے شیدا دیکھیں گے 
کچھ خار بھی ہیں گلزاروں میں
ہَم دیکھیں گے 

اک ہَم ہی تو ہیں جو دیکھیں گے 
ہَم دیکھیں گے 

جب کعبے میں وہ آئیں گے 
تب مصر کو کون پکارے گا 
یوسفؑ بھی نظر آئیں گے وہاں 
اے مولا تیرے بیماروں میں
ہَم دیکھیں گے 

جب شمر و عمر کے یاتھوں میں
رسی بندھوائی جائے گی
کل تم نے حرم کو پھرایا تھا
اب تم بھی پھرو بازاروں میں
ہَم دیکھیں گے

وہ زلف کو جب لہرائیں گے 
خود رات چُپے گی پردے میں 
رخ دیکھ كے چاند بھی کہہ دے گا 
کیا نور ہے ان رخساروں میں
ہَم دیکھیں گے 

اک ہَم ہی تو ہیں جو دیکھیں گے 
ہَم دیکھیں گے 

قاسمؑ عباسؑ علی اکبرؑ
اک تخت پہ سب بیٹھے ہوں گے 
جبریل بھی فخر سے بولیں گے 
یہ ہیں میرے سرداروں میں
ہَم دیکھیں گے 

اے ماجد شادمان ہوں گے ہَم 
جب لشکر میں گونجے گی صدا 
سلمان و عمار و بوذر
سب فوج كے ہیں سالاروں میں
ہَم دیکھیں گے