Dil se jab bulayain gay wo zaroor aayain gay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

دِل سے جب گے     وہ ضرور آئیں گے 
سن لے منکر غیبت	 ظلم کی ہوا میں بھی 
انتظار کی شمعیں      ہم سدا جلائیں گے 

آستین الٹے گا	جب محافظ گلشن 
ذوالفقار حیدر کی	کاٹ دیکھ کر دشمن 
بھاگنا تو چاہیں گے       پر نہ بھاگ گے 

ڈوب جائیں گے ظالم      خون اتنا برسے گا 
فاطمی گھرانے کا      شیر ایسا گرجے گا 
جو لحد میں سوئے ہیں	  وہ بھی جاگ جائیں گے 

دشمن عزا آخر     کیا ہمیں سمجھتا ہے 
میری پاک آنکھوں میں 	   اشک غم کا دریا ہے 
تخت و تاج بدعت کے	 اِس میں ڈوب جائیں گے 

ہر طرف زمانے میں	   ہو گا حشر کا عالم 
آخری محمدؑ کا	وار دیکھ کر میثم
جنگ خیبر و خندق	لوگ بھول جائیں گے

Dil se jab bulayain gay Wo zaroor aayain gay
Sun le munkir e ghaibat	Zulm ki hawa may bhi
Intezar ki sham-ain 	Ham sada jalayain gay

Aasteen ultay ga	Jab muhafiz e gulshan
Zulfiqar e Haider ki	Kaat dekh kar dushman
Bhagna to chahain gay	Par na bhag payain gay

Doob jayain gay zalim	Khoon itna barsay ga
Fatimi gharany ka 	Shair aisa garjay ga
Jo lahad may soey hain	Wo bhi jaag jayain gay

Dushman e aza aakhir 	Kia hamain samajhta hay
Meri paak ankhon may	Ashk e gham ka darya hay
Takht o taj bidat ke	Is may doob jayain gay

Har taraf zamanay may	Ho ga hashr ka aalam
Aakhri Muhammad ka	War dekh kar Meesam
Jang e Khaibar o Khadaq	Log bhool jayain gay