Tu Ali(as) ki karta hay hamsari
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Tu Ali(as) ki karta hay hamsari
Yeh teray zameer ki bhool hay
Tujh me Ali(as) ki wila nahi
Teri bandagi bhi fazool hay

Tu Ali(as) ki karta hay hamsari...

Ye jo kar raha hay to sakhtiyan
Meray pyar ka hay ye imtehan
Tujhe takht par bhi sakoon nahi
Mujhe dar par bhi mili amaan

Tu Ali(as) ki karta hay hamsari...

May adoo ko kyun na adoo kahoon
Meri zindagi ka usool hay
May maroon to lab pe ho ya Ali(as)
Mujhe aisa marna qabool hay

Tu Ali(as) ki karta hay hamsari...

Wo Ali(as) jamala e innama 
Wo Ali(as) jo hasil e qul kafa
Usay ki kahoon ye tu khud bata
Chalo tujh pe chorra ye faisala

Tu Ali(as) ki karta hay hamsari...

Jisay haq ne bakhsha hay martaba
Jo azal se shohr e Batool hay
Raha jaagta to imam tha
Kabhi so gaya to Rasool(sawaw) hay

Tu Ali(as) ki karta hay hamsari...

تو علیؑ کی کرتا ہے ہمسری
یہ تیرے ضمیر کی بھول ہے
تجھ میں علیؑ کی وِلا نہیں
تیری بندگی بھی فضول ہے

یہ جو کر رہا ہے تُو سختیاں	میرے پیار کا ہے یہ امتحاں
تجھے تخت پر بھی سکوں نہیں    مجھے دار پر بھی ملی اماں
میں عدو کو کیوں نہ عدو کہوں     میری زندگی کا اصول ہے
میں مروں تو لب پہ ہو یا علیؑ      مجھے ایسا مرنا قبول ہے
تو علیؑ کی کرتا ہے ہمسری

وہ علیؑ جمال ئے اِنَّما      وہ علیؑ جو حاصلِ قُل کفا
اُسے کیا کہوں تُو خود بتا     چلو تجھ پہ چھوڑا یہ فیصلہ
جسے حق نے بخشا ہے مرتبہ    جو ازل سے شوہر بتولؑ ہے
رہا جاگتا تو امامؑ تھا     کبھی سو گیا تو رسول ہے
تو علیؑ کی کرتا ہے ہمسری