Kha gaye Shaam ke zindan may andheray baba
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



عزادارو دعا مانگو ، کوئی ایسے یتیم نہ ہو
جیسے سكینہؑ یتیم ہوئی
شام كے زندان میں جب سكینہؑ کو بابا کا سَر ملا
لپٹا كے سَر کو سینے سے ، بچی نے یہ کہا
کھا گئے شام كے زنداں میں اندھیرے بابا

کس کو کہتے ہے یتیمی یہ سنا تھا میں نے
آپ كے بعد یہ احساس ہوا ہے بابا

ہائــــے ، آپ كے بعد یتیمی کی سزا پائی ہے
اتنی تنہا ہوں كہ سایہ ہے نہ پرچھائی ہے
رات رو رو کے گزرتی ہے تو دن ماتم میں
قید خانے میں یونہی سال کٹا ہے بابا

ہائــــے ، زندگی میری دکھوں سے ہے عبارت بابا
کیسی قسمت نے دکھائی ہے مصیبت بابا
میں جو روتی ہوں تو لگتے ہیں تمانچے بابا
آپ کی یاد میں رونا بھی سزا ہے بابا

ہائــــے ، اشک آنکھوں سے نکلتے ہیں ، لہو کانوں سے
اب درندوں سے نہیں خوف ہے انسانوں سے
ایک مجبور یتیما پر ستم ڈھاتے ہیں
میری تقدیر میں درّوں کی جفا ہے بابا

ہائــــے ، آپ کی طرح سے روتے ہے اُجالے بابا
کون زندان سے اب مجھ کو نکالے بابا
تُو نے مانگا تھا دعاؤں میں خدا سے جس کو
اب وہی بیٹی ہے زندانِ جفا ہے بابا

ہائــــے ، کتنے ارمان تھے زنداں سے میں گھر جاؤں گی
ایسا لگتا ہے یہیں رَو رَو كے مر جاؤں گی
یہ ستمگار سكینہؑ کو قبر کیا دیں گے
کیا کفن آپ کے لاشے کو مِلا ہے بابا

ہائــــے ، بابا کہتے ہیں یہ زنداں كے اندھیرے مجھ سے
موت ہی آئیگی اب مجھ کو دِلاسے دینے
میری ہر سانس ہی رہتی ہے ستم کی زد پر
ایسے جینے سے تو مرنا ہی بَھلا ہے بابا

ہائــــے ، زخم لاکھوں ہیں کلیجے میں دکھاؤں کیسے
مجھ پہ جو بیت رہی ہے وہ بتاؤں کیسے
پیاس لگتی ہے تو پی لیتی ہوں آنسو اپنے
شمر کے دُرّے سكینہؑ کی غِزا ہیں بابا

لفظ مظہر نے جو لکھے ہیں لہو روتے ہیں
شادماں آنکھ سے یوں اشکِ عزا بہتے ہیں
ایسا لگتا ہے كہ زنداں سے صدا آتی ہے
ایسا نوحہ میری غربت پہ لکھا ہے بابا

Azadaro dua mango, koi aise yateem na ho
Jaise Sakina yateem hui, Shaam ke Zindaan may
Jab Sakina ko Baba ka sar mila
Lipta ke sar ko seenay se, bachi ne yeh kaha
Kha gaye Shaam ke zindaan may andheray baba (x2)

Kisko kehte hay yetimi ye, suna tha maine
Aap ke baad ye ehsaas hua hay baba

1. Aap ke baad yetimi ki saza paayi hay,
Etni tanha hun ke saaya hay - na parchaayi hay,
Rat ro-roke guzarti hay, to din maatam may,
Qaid khane may yuhin saal kata hay baba

2. Zindagi meri dukhoon say hay ibarath baba,
Kaisi qismat ne dikhaayi hay musibath baba,
Mai jo rotii hun to lagte hay tamache baba,
Aap ki yaad mei rona bhi saza hay baba

3. Haey, Ashk aankhoon say nikalte hay, Lahu kaano say,
Ab darindoon say nahin khauf, hay insaanoo say,
Ek majbur yetimaa par - sitam dhaate hay,
Meri taqdeer mai durroon ki jafaa hay baba

4. Aap ki tarha say rooute hay ujaale baba,
Kaun zindaan say ab mujko nikale baba,
Tune mangaa tha duwa-O-mai khuda say jisko,
Ab wohi beti hay zindaane jaafa hay baba

5. Kitne armaa thay ke zindaan say may ghar jaaungi,
Aisa lagta hay yehi ro ro ke mar jaungi,
Ye sitamgaar Sakina ko kafaan kya denge,
Kya kafan aapke lashe ko mila hay baba

6. Haey, Baba kehte hain ye zindaan ke andhere mujh se,
Maut hi aayegi ab mujh ko, dilaasay denay,
Meri har saaans hi rehti hay sitam ki zad par,
Aise jeene say to marna hi bhala hay baba

7. Zakm laakhon hay kalaije may, dikhaun kaise,
Mujh pe jo beet rahi hay woh bataun kaise,
Pyaas lagti hay to pilati hun aansoon apne,
Shimr ke durray Sakina ki ghiza hay baba

8. Lafz MAZHAR ne jo likhay hain, Lahooo roote hain,
SHADMAN aankh say yun ashk-e-aza behte hain,
Aisa lagtaa hay ke zindaan say, sada aati hay
Aisa nawha meri ghurbath pay likha hay Baba