Bohat hi sakht hay ya Rab yeh imtehan e Hussain(a.s.)
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Haey, Khuda ne jab malakul maut ko ye izn diya
Ke roohe Hazrat-e-Sarwar nikaal kar le aa
Rahay khayaal ke, Shabbir ko na ho eezaa
Hussain (x3) Pehle hi zakhmo se chur chur hua
Malak pukara ye, mujh say na ho sake ga khudaa

May kis tarha se nikaloon, badan se jaan-e-Hussain
Bohat hi sakht hay ya Rab, ye imtehan-e-Hussain

1. Haey, Laga hai zakhm tabar, beh raha hai sar se lahoo
Bhare hain khoon mein jaane Rasool ke gesu
Qareeb jaake rakhoon dil pe kis tarah qaboo
Ke is lahoo mein tho hai Fatema ke doodh ki bu
May kis tarha se nikaloon, badan se jaan-e-Hussain
Bohat hi sakht hay ya Rab, ye imtehan-e-Hussain

2. Haey, May phir in-aankhon pe dhaoon sitam ye kya hay zaroor
Bichar ke jo Ali Akber se ho gayeen benoor
Nida ye aayi dahan se nikaal jaane huzoor
Kaha dahan mein tho kaante pade hain Rabbe ghafoor
May kis tarha se nikaloon, badan se jaan-e-Hussain
Bohat hi sakht hay ya Rab, ye imtehan-e-Hussain

3. Nida ye aayi ke gardan se khynchna in ki
Kaha my kya kahoon garden pe chal rahi hai churi
Churi pakadke ye chillati hay koi bibi
Na zibha kar mere bacche ko mai duwa doongi
May kis tarha se nikaloon, badan se jaan-e-Hussain
Bohat hi sakht hay ya Rab, ye imtehan-e-Hussain

4. Haey, Nida ye aayi ke seene se qabz kar le jaan
Kaha wo teeron se chalni hay aey mere Rehmaan
Abhi tho maarke barchi hata tha ek shaitan
Aur ab to hay tahe zaanuye Shimr ye quraan
May kis tarha se nikaloon, badan se jaan-e-Hussain
Bohat hi sakht hay ya Rab, ye imtehan-e-Hussain

5. Haey, Nida ye aayi ke mazloomiyet kay rutba shinas
Qamr se khynchle kaabe ki jaan be waswaas
Kaha malak ne tarap kar ba-dardo hasrato yaas
Qamar tho toot gayi, jabse mar gaye Abbas
May kis tarha se nikaloon, badan se jaan-e-Hussain
Bohat hi sakht hay ya Rab, ye imtehan-e-Hussain

6. Falak se tab hua roohul amee ka ran mein nuzool
Kaha pukar ke muh dhamp lo baraye Batool
Pisar ke laash pe kholegi baal binte Rasool
Sada ye thi malakul mauth ki ba huzn malool
May kis tarha se nikaloon, badan se jaan-e-Hussain
Bohat hi sakht hay ya Rab, ye imtehan-e-Hussain

7. Haey, Isay ye hukm hu par- fikr –ye hay ay yazdaan
Har ek juzv hay zakhmi lagaaoon haath kahan
Khuda pukara ye mushkil karenge hum aasaan
Na tu nikaal mere aashiqe ghareeb ki jaan
May khud nikal raha hoon badan se jaan-e-Hussain
Ke khatm honay ko ab hay yeh imtehan-e-Hussain

خدا نے جب ملک الموت کو یہ اذن دیا
کہ روح حضرت سرور نکال کر لے آ
رہے خیال کہ شبیر کو نہ ہو ایذا
حسین پہلے ہی زخموں سے چور چور ہوا
ملک پکارا یہ مجھ سے نہ ہو سکے گا خدا
میں کس طرح سے نکالوں بدن سے جان حسینؑ
بہت ہی سخت ہے یا رب یہ امتحان حسینؑ

لگا ہے زخم تبر بہہ رہا ہے سر سے لہو
بھرے ہیں خون میں جان رسول کے گیسو
قریب جاکے رکھوں دل پہ کس طرح قابو
کہ اس لہو میں تو ہے فاطمہؑ کے دودھ کی بو
میں کس طرح سے نکالوں بدن سے جان حسینؑ
بہت ہی سخت ہے یا رب یہ امتحان حسینؑ

میں پھر ان آنکھون پہ ڈھاؤں ستم یہ کیا ہے ضرور
بچھڑ کے ہو علی اکبرؑسے ہو گئیں بے نور
ندا یہ آئی دہن سے نکال جان حضور
کہا دہن میں تو کانٹے پڑے ہیں رب حضور
میں کس طرح سے نکالوں بدن سے جان حسینؑ
ؑ بہت ہی سخت ہے یا رب یہ امتحان حسینؑ

ندا یہ آئی کہ گردن سے کھینچ جان ان کی
کہا میں کیا کہوں گردن پہ چل رہی ہے چھری
چھری پکڑ کے یہ چلاتی ہے کوئی بی بی
نہ ذبح کر میرے بچے کو میں دعا دوں گی
میں کس طرح سے نکالوں بدن سے جان حسینؑ
بہت ہی سخت ہے یا رب یہ امتحان حسینؑ

ندا یہ آئی کہ سینے سے قبض کرلے جاں
کہا وہ تیروں سے چھلنی ہے اے میرے رحماں
ابھی تو مار کے برچھی ہٹا تھا اِک شیطاں
اوراب تو ہے تہہ زانوئے شمر پہ قرآں
میں کس طرح سے نکالوں بدن سے جان حسینؑ
بہت ہی سخت ہے یا رب یہ امتحان حسینؑ

ندا یہ آئی کہ مظلومیت کے رتبہ شناس
کمر سے کھینچ لے صابر کی جان بے وسواس
کہا مَلک نے تڑپ کر بہ دردو حسرت و یاس
کمر تو ٹو ٹ گئی جب سے مر گئے عباسؑ
میں کس طرح سے نکالوں بدن سے جان حسینؑ
بہت ہی سخت ہے یا رب یہ امتحان حسینؑ

فلک سے تب ہوا روح الامیں کا اِن میں نزول
کہاپکار کے منہ ڈھانپ لو برائے بتولؑ
پسر کی لاش پہ کھولیں گی بال بنتِ رسولؑ
صدا یہ تھی ملک الموت کی بہ ٖحزن و ملول
میں کس طرح سے نکالوں بدن سے جان حسینؑ
بہت ہی سخت ہے یا رب یہ امتحان حسینؑ

متین یہ حکم مگر فکر یہ ہے اے یزداں
ہر ایک عظو ہے زخمی لگاؤں ہاتھ کہاں
خدا پکارا یہ مشکل کریں گے ہم آساں
نہ تو نکال میرے عاشق غریب کی جاں
میں خود نکال رہا ہوں بدن سے جان حسینؑ
کہ ختم ہونے کو اب ہے یہ امتحان حسینؑ