May rahoon ya na rahoon tera Islam rahay ga
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Mein rahun ya na rahun Ya Hussain (x2)
Ma’bud taqabbal minna
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

1. Ay foje ashqiya mera islam rahega
Quran rahega mera peghaam rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

2. Jab zohr tak hussain bahattar ko rochuke
Akbar ko rochuke Ali Asghar ko rochuke
Ik dopahar mein bawafa lashkar ko rochuke
Phir foje bad nasab se mukhatib huwe imam
Hujjat tamam karta hun sunlo mera payaam
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

3. Farmaate the Hussain ke mein be qasoor hun
Roshan he tumpe chashme payambar ka noor hun
Faqon se mein nidhal hun zakhmon se chhur hun
Zakhmon pe zakhm pyaas ki shiddat mein khawunga
Lekin mein nana jaan se wada nibhaunga
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

4. Darya ko tum ne chheen liya maine kuchh kaha
Pani dikha dikha ke piiya meine kuchh kaha
Daagh akbare jawaan ka diya meine kuchh kaha
Haq par hun mere haq mein sina bolrahi he
Sun lo who azan meri zubaan bol rahi he
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

5. Maqsad he lailah ki baqa aur kuchh nahin
Wada ho zere tegh wafa aur kuchh nahin
Iske siwa labon pe dua aur kuchh nahin
Razi ho mujhse mera khuda chahta hun mein
Mein hun hussain sab ka bhala chahta hun mein
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

6. Maqsad nahin he jang hamara khuda gawah
Khat bhejke he tumne bulaya khuda gawah
Bejurm tumne mujhko sataya khuda gawah
Khanjar tale baland mein takbir karunga
Apne lahu se khak pe tehreer karunga
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

7. Mein aur karun yazeed ki bayat nahin nahin
Badlun ajal ke dar se shariyat nahin nahin
Jeene ke badle chorun shahadat nahin nahin
Tum kon ho naqaab rukhon se hataounga
Mein kon hun ye noke sina par bataaounga
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

8. Aakar dare khayam pe Zainab ko di sada
Aa aey mere ghareeb behen aakhri dua
Le aakhri salam Hussaine ghareeb ka
Maqsad he mera ka ye sabaq tujhko yaad he
Meri shareeke kaar mujhe etemaad he
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

9. Zainab tarap ke boli ke bhaya samajhgayi
Bhaiya tere ishaare ko behna samajh gayi
Mein kya teri ghareeb Sakina samajh gayi
Khutbon se mein hilaungi qasre yazeed ko
Marne na dungi ab mein kisi bhi shaheed ko
Hal min nasirin yansurna

10.Uthtaa ghobar zulm karakti he bijliyan
Zeen se gire hussain uthi surkh aandhiyan
Nagaah sar hussain ka aaya sare sina
Quran suna ke sayyade mazloom ne kaha
Lo nanajaan wada wafa meine kardiya
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

Mabud taqabbal minna

10.Aey Sarwar o Rehan ye lamha ajeeb he
Neze pe lab kusha ye Hussaine ghareeb he
Zainab tumhari shame gharibaan kareeb he
Sab kuchh tere hawaale he ab tum sambhalna
Apna khayaal rakhna Sakina ko paalna
Mein rahun ya na rahun (x2)
Mera islam rahega Mera pegham rahega
Mein rahun ya na rahun (x2)

میں رہوں یا نہ رہوں میرا اسلام رہے گا
اے فوج اشقیاء میرا اسلام رہے گا
قرآن رہے گا میرا پیغام رہے گا

جب ظہر تک حسینؑ بہتـّـر کو رو چکے
اکبر کو روچکے علی اصغر کو روچکے
ایک دوپہر میں باوفا لشکر کو روچکے
پھر فوج بد نصب سے مخاطب ہوۓ امام
میں رہوں یا نہ رہوں میرا اسلام رہے گا

فرماتے تھے حسینؑ میں بے قصور ہوں
روشن ہے تم پہ چشمہ پیعمبرۖ کا نور ہوں
فاقوں سے میں نڈھال ہوں زخموں سے چور ہوں
زخموں پہ زخم پیاس کی شدت میں کھاؤں گا
لیکن میں نانا جان سے وعدہ نبھاؤں گا
میں رہوں یا نہ رہوں میرا اسلام رہے گا

دریا کو تم نے چھین لیا میں نے کچھ کہا
پانی دکھا دکھا کے پیا میں نے کچھ کہا
داغ اکبر جواں کا دیا میں نے کچھ کہا
حق پر ہوں میرے حق میں سناں بول رہی ہے
سن لو وہ اذاں میری زباں بول رہی ہے
میں رہوں یا نہ رہوں میرا اسلام رہے گا

مقصد ہے لا الہ کی بقا اور کچھ نہیں
وعدہ ہو زیر تیغ وفا اور کچھ نہیں
اس کے سواء لبوں پہ دعا اور کچھ نہیں
راضی ہو مجھ سے میرا خدا چاہتا ہوں میں
میں ہوں حسینؑ سب کا بھلا چاہتا ہوں میں
میں رہوں یا نہ رہوں میرا اسلام رہے گا

مقصد نہیں ہے جنگ ہمارا خدا گواہ
خط بھیج کے ہے تم نے بلایا خدا گواہ
بے جرم تم نے مجھ کو ستایا خدا گواہ
خنجر تلے بلند میں تکبیر کروں گا
اپنے لہو سے خاک پہ تحریر کروں گا
میں رہوں یا نہ رہوں میرا اسلام رہے گا

میں اور کروں یزید کی بیعت نہیں نہیں
بدلوں اجل کے ڈر سے شریعت نہیں نہیں
جینے کے بدلے چھوڑوں شہادت نہیں نہیں
تم کون ہو نقاب رخوں سے ہٹاؤں گا
میں کون ہوں یہ نوک سناں پہ بتاؤں گا
میں رہوں یا نہ رہوں میرا اسلام رہے گا

آکر در خیام پہ زینب کو دی صدا
آ اے میری غریب بہن آ قریب آ
لے آخری سلام حسینؑ غریب کا
مقصد ہے میرا کیا یہ سبق تجھ کو یاد ہے
میری شریک کار مجھے اعتماد ہے
میں رہوں یا نہ رہوں میرا اسلام رہے گا

زینب تـڑپ کے بولی کہ بھیا سمجھ گئ
بھیا تیرے اشارے کو بہنا سمجھ گئ
میں کیا تیری غریب سکینہؑ سمجھ گئ
خطبوں سے میں ہلاؤں گی قصر یزید کو
مرنے نہ دوں گی اب میں کسی بھی شہید کو
میں رہوں یا نہ رہوں میرا اسلام رہے گا

ھل من ناصر ینصرنا

اٹھا وہ بار ظلم کڑکتی ہیں بجلیاں
زیں سے گرے حسینؑ اٹھی سرخ آندھیاں
ناگہاں سر حسینؑ کا آیا سر سناں
قرآں سنا کے سید مظلوم نے کہا
لو نانا جان وعدہ وفا میں نے کردیا
میں رہوں یا نہ رہوں میرا اسلام رہے گا

اے سرور و ریحان یہ لمحہ عجیب ہے
نیزے پہ لب کشاء یہ حسینؑ غریب ہے
زینب تمہاری شام غریباں قریب ہے
سب کچھ تیرے حوالے ہے اب تم سنبھالنا
اپنا خیال رکھنا سکینہؑ کو پالنا