Jaltay huay khaimo ki bujhti rakh par bibyan reh gayeen
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

سوگیا لشکر سوگیا لشکر
اے شام غریباں اے شام غریباں
سوگیا لشکر سوگیا لشکر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں
جلتے ہوۓ خیموں کی بجھتی راکھ پر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

دل سے لگاۓ داغ بہتر نوحہ گر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں
جلتے ہوۓ خیموں کی بجھتی راکھ پر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

شام غریباں سے کچھ پہلے
جھولا چادر بستر تھا
پہلو میں ہمشکل پیعمبرؑ
گود میں ماں کی اصغرؑ تھا
گودیاں خالی مانگیں اجڑی بے پسر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

جلتے ہوۓ خیموں کی بجھتی راکھ پر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

ہاں یہ ابوطالبؑ کا کنبہ
بیٹیاں ساری حیدرؑ کی
عظمت زہراؑ عظمت مریمؑ
عزت تھیں پیغمبرۖ کی
چادریں مانگتی نام پیعمبرؐ دربدر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

جلتے ہوۓ خیموں کی بجھتی راکھ پر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

ڈھلتا سورج سوچ رہا ہے
وقت سحر کیا منظر تھا
محو عبادت زیر علم شبیرؑ کا سارا لشکر تھا
سوگیا لشکر جاگنے والی رات بھر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

جلتے ہوۓ خیموں کی بجھتی راکھ پر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

دریا موجیں مار رہا ہے
پیاس ابھی تک باقی ہے
شاید غازیؑ لوٹ کے آۓ
آس ابھی تک باقی ہے
دیکھ ذرا زینبؑ کے برادر جاگ کر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

جلتے ہوۓ خیموں کی بجھتی راکھ پر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

کوئی نہیں جو پوچھ لے آکر
کیا ہوئ زینبؑ تیری چادر
تیرے تو تھے اٹھارہ بردار
کیوں ہے اکیلی پہرے پر
ہمسفر مقتول ہوۓ سب ہمسفر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

جلتے ہوۓ خیموں کی بجھتی راکھ پر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

سوچو ذرا ریحان و سرور
شام غریباں کا وہ منظر
چاک گریباں آۓ جو حیدرؑ
دیکھ کے زینبؑ کو پہرے پر
رو ديۓ حیدرؑ خیمے مقتل دیکھ کر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں

جلتے ہوۓ خیموں کی بجھتی راکھ پر
بیبیاں رہ گئيں ‘ بیبیاں رہ گئيں