Bazaar ke manzar ko aur apnay khulay sar ko bhooli nahi may
Efforts: Nosheen Shah



Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein (x2)

1) Apne bandhe hatho ko - bimar ke zewar ko - bhuli nahi mein
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

2) Uththi hui andhi ko - wahshat ko bayabaan ko
   Chupte huay suraj ko - taariki ko maydaan ko
   Chalte huay khanjar ko - nezay pe tere sar ko - bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

3) Ek chand tha badli mein - chupta tha nikalta tha
   Parda dare khayma ka - uththa kabhi girta that
   Who khaima-e–laila se - hai rukhsat-e-Akbar ko bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

4) Yaad ata hay dulhan ko - ghash kis tarha aye thay
   Ik gathri shahe wala - jab kandhoon pe laye thay
   Is lash ki gathri ko - us khoon bhari chadar ko - bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

5) Fizza ko mera bhai - ma kehke bulata tha
   Dam us ka meray bhai - ke naam pe jata tha
   Rutbay may jo maa ban kar - ayi usi madar ko - bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

6) Lehratay huwe neza - haey shimr ka wo barhna
   Aa aa ke mere peeche - har bibi ka who chupna
   Sholo mein ghire ghar ko - chinti hui chadar ko - bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

7) Yaad ata hai ek maa ka - who khaak mein dhas jana
   Aur aag ke sholo mein - who maa ka jhulas jana
   Jalte huwe juhle se - lipti huwi madar ko - bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

8) Maasum Sakina ko - barhte huwe nezoon ko
   Khichte huwe gaalon ko - be rehm tamacho ko
   Ristay huwe kano ko - kichtei huwe gohar ko bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

9) Jis raat mein tanha thi - us raat ke dhalne ko
   Toote huwe neze ko - us raat ke pehre ko
   Bachoon ke sisakne ko - aur khaak ke bistar ko -bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

10)Un shaam ki galiyon ko - jin se khule sar guzray
   Us dar se guzar ne meinn - thay sola pehar guzre
   Darbar ke us dar ko - aur shamiyo ke sar ko bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

11)Hai aaj bhi woh girya - hai aaj bhi who zari
   Hai aaj bhi pathar ke - sine se lahu jari
   Rote huwe pathar ko - pathar pe rakhe sar ko - bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein

12)Aati hay nabi zadi - aawaz yeh zainab ki
   Hay mujh ko qasam sadiyoon - se sookhe huay lab ki
   Piysasay Ali Asghar ko – tootay huay saaghar ko bhuli nahi mei
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein
   Apne bandhe hatho ko - bimar ke zewar ko bhuli nahi mein
   Bazaar ke manzar ko - aur apne khule sar ko - bhuli nahi mein (x2)

بازار کے منظر کو اور اپنے کھلے سرکو بھولی نہیں میں
اپنے بندھے ہاتھوں کو بیمار کے زیور کو بھولی نہیں میں

اٹھتی ہوئی آندھی کو، محشر کو بیاباں کو
چُھپتے ہو ئے سورج کو، تاریکی کو میداں کو
چلتے ہو ئے خنجر کو، نیزے پہ تیرے سر کو
بھولی نہیں میں

اِک چاند تھا بدلی میں، چھپتا تھا نکلتا تھا
پردہ درِ خیمہ کا، اٹھتا کبھی گرتا تھا
وہ خیمِہءِ لیلیٰ سے، ہائے رخصتِ اکبرؑ کو
بھولی نہیں میں

یاد آتا ہے دلہن کو، غش کس طرح آئے تھے
اِک گٹھری شِہ والا، جب کاندھوں پہ لائے تھے
اُس لاش کی گٹھری کو، اُس خوں بھری چادر کو
بھولی نہیں میں

لہراتے ہو ئے نیزہ، ہئے شمر کا وہ بڑھنا
آ آ کے میرے پیچھے، ہر بی بی کا وہ چُھپنا
شعلوں میں گھرے گھر کو، چھنتی ہوئی چادر کو
بھولی نہیں میں

معصوم سکینہؑ کو، بڑھتے ہو ئے نیزوں کو
رِستے ہو ئے گالوں کو، بے رحم تمانچوں کو
دُکھتے ہو ئے کانوں کو، کھنچتے ہو ئے گوہر کو
بھولی نہیں میں

جس رات میں تنہا تھی، اُس رات کے ڈھلنے کو
ٹو ٹے ہو ئے نیزے کو، اُس رات کے پہرے کو
بچوں کے سسکنے کو، اور راکھ کے بستر کو
بھولی نہیں میں

اُن شام کی گلیوں کو، جن سے کھلے سر گزرے
جس درسے گزر نے میں، یہ سُولہ پہر گزرے
دربار کے اُس در کو، اور شامیوں کے شر کو
بھولی نہیں میں

ہے آج بھی وہ گریا، ہے آج بھی وہ زاری
ہے آج بھی پتھر کے، سینے سے لہو جاری
رو تے ہو ئے پتھر کو، پتھر پہ رکھے سر کو
بھولی نہیں میں 

فضّہ کو میرا بھائی، ماں کہہ کے بلاتا تھا
دم اس کا میرے بھائی، کے نام پہ جاتا تھا
رتبے میں جو ماں بن کر، آئی اُس مادرکو 
بھولی نہیں میں

یاد آتا ہے اِک ماں کا، وہ خاک میں دھنس جانا
اور آگ کے شعلوں میں، وہ ماں کا جُھلس جانا
جلتے ہو ئے جھو لے سے، لپٹی ہوئی مادر کو
بھولی نہیں میں

آتی ہے نوید اب بھی، آواز یہ زینبؑ کی
ہے مجھ کو قسم صدیوں، سے سوکھے ہو ئے لب کی
پیاسے علی اصغرؑ کو، سوکھے ہو ئے ساغَر کو
بھولی نہیں میں