Abbas na ab loat ke aaye ga Sakina
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Sakina (x2) Na Rona Sakina (x4) 
Abbas na ab lout ke ayega Sakina (x3)

Abbas na ab lout ke aayega Sakina (x2) 
Ab koun tere naaz, uthayega Sakina 

1. Bhaayi se vida hoke-yun, farmaate-the Maula (x2) 
   Ab koun mere ghar ko bachayega Sakina
   Abbas na ab lout ke aaye ga Sakina (x2) 

2. Kya hoga zara der mein malum hai humko (x2) 
   Tar khoon-mein alam nehr-se aayega Sakina 
   Abbas na ab lout ke aaye ga Sakina (x2) 

3. Ek shoor hai, kohram hai, Bibi labe dariyaa (x2) 
   Lagta hai ke ab sher na aayega Sakina 
   Abbas na ab lout ke aaye ga Sakina (x2) 

4. Talwaron may naizon may ghira hai mera bhaayi-2
   Woh mashk-O-alam kaise bachayega Sakina 
   Abbas na ab lout ke aaye ga Sakina (x2) 

5. Abbas na honge tera, Baba bhi na hogaa (x2) 
   Ab koun teri pyaas bhujayega Sakina 
   Abbas na ab lout ke aaye ga Sakina (x2) 

6. Kiske liye Bibi daray-khaima pe khadi ho (x2) 
   Ab koyi taraayi se na aayega Sakina
   Abbas na ab lout ke aaye ga Sakina (x2) 

7. Abbas ka wada hai-ke, paani na piyegaa (x2) 
   Pehle tumhe kausar me pilayega Sakina 
   Abbas na ab lout ke aaye ga Sakina (x2) 

8. Aey “SARWAR-O-REHAN” ye kehte rahe maula (x2)  
   Ye gham tujhe ta hashr rulaye ga Sakina
   Abbas na ab lout ke aaye ga Sakina (x2) 

سکینہؑ
نہ رو نا سکینہؑ ‘ نہ رو نا سکینہؑ
نہ رو نا سکینہؑ ‘ نہ رو نا سکینہؑ

عباسؑ نہ اب لوٹ کے آۓ گا سکینہؑ
اب کون تیرے ناز اٹھاۓ گا سکینہؑ

بھائ سے وداع ہو کے یوں فرماتے تھے مولا
اب کون میرے گھر کو بچاۓ گا سکینہؑ

کیا ہوگا ذرا دیر میں معلوم ہے ہم کو
تر خون علم نہر سے آۓ گا سکینہؑ

اک شور ہے کہرام ہے بی بی لب دریا
لگتا ہے کہ اب شیر نہ آۓ گا سکینہؑ

تلواروں میں نیزوں میں گھرا ہے میرا بھائ
وہ مشک و علم کیسے بچاۓ گا سکینہؑ

عباسؑ نہ ہونگے تیرا بابا بھی نہ ہوگا
اب کون تیری پیاس بجھاۓ گا سکینہؑ

کس کے لیے بی بی در خیمہ پہ کھڑی ہو
اب کوئ ترائ سے نہ آۓ گا سکینہؑ

عباسؑ کا وعدہ ہے کہ پانی نہ پئیے گا
پہلے تمہیں کوثر میں پلاۓ گا سکینہؑ

اے سرور و ریحان یہ کہتے رہے مولا
یہ غم تجھے تاحشر رلاۓ گا سکینہؑ

عباسؑ نہ اب لوٹ کے آۓ گا سکینہؑ
نہ رو نا سکینہؑ ‘ نہ رو نا سکینہؑ