Kaisay rehti ho bibi yahan
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Haye jab mein bibi Sakina ke roze pe tha
Dekh kar unke roze ko dil ne kaha
Kal ye roza hi bibi ka zindaan-e tha 
Dekha roza to maazi me mein kho gaya
Saamnay mere zindaan tha shaam ka 
Us ghari mere lab par fughaan aa gayi
 
Roshni ka safar bhi nahin
Aur hawa ka guzar bhi nahin
Kis qadr habs hay al amaan
Kaise rehti ho bibi yahaan
Haye haaye 

1. Tum ko yaade padar sone deti nahi
   Aur us pe sitam he ye khaufe laeen
   Zabte gham eik azaar hay
   Saans lena bhi dushwaar hay
   Tum to tum qaid hain sisikiya 
   Kaise rehti ho bibi yahaan
   Haye haye 

2. Zakhm khaati ho aur ashk peeti ho tum
   Mujhko hairat he kis tarha jeeti ho tum
   Taziyaane dawa ban gaye
   Ya andhere shifa ban gaye
   Qaid me aisa mumkin kahan
   Kaise rehti ho bibi yahan
   Haye haye 

3. Meri bibi mujassam fughan ho gayi
   Kya khata thi ke qaidi yahan ho gayi
   Kam sini mein yateemi mili
   Ghar se nikli aseeri mili
   Sun raha hun ye kehti hay maa
   Kaise rehti ho bibi yahan
   Haye haye 

4. Fitrati sari baatein mujhe hay khabar
   Qaid mein qaidi ko yaad aata hay ghar
   Phul banke chaman me rahi
   Kitne nazon se ghar may pali
   Ab ye gham ye sitam sakhtiyaan
   Kaise rehti ho bibi yahan
   Haye haye 

5. Shaam ki aurton se suna hay yahi
   Tum jo roti ho sota nahin he shaqi
   Maarta he who Sajjad ko
   Seh ke Sajjad uftaad ko
   Karte rehtay hein bas ye fughan
   Kaise rehti ho bibi yahan
   Haye haye 

6. Dil pe kohe garan ek ehsaas hay 
   Chhote bachhe to darte hain tanhaayi say
   Har ghari pehradaaron ka dar
   Saath koi nahin nawha gar
   Na padar na chacha aur na maa
   Kaise rehti ho bibi yahan
   Haye haye 

7. Tum jo ehle haram se juda qaid ho
   Phir to haq he tumhara ke nawha karo
   Haye qismat ye na ho saka
   Hukm zalim se tujh ko mila
   Nawha khaani pe pabandiyan
   Kaise rehti ho bibi yahan
   Haye haye 

8. Aayi kaanon mein ye qaidiyon ki fughan
   Roke kehti hein zindan main kuchh bibiyan
   Hum ye keh keh ke matam karein
   Is yateema ko zindaan mein
   Pursa deti hain tanhaiyan 
   Kaise rehti ho bibi yahan
   Haye haye 

9. Phir tasalsul tasawwur ka toota mera
   Mere peshe nazar roza bibi ka tha
   Haath masroofe matam huay
   Ashk ankhon se girne lagay 
   Phir bhi honton pe thi ye fughan
   Kaise rehti ho bibi yahan
   Haye haye 

10. Lafz Mazhar ke ehsaas Farhaan ka 
    Woh ye kehta he bibi se meine kaha
    Meine ye kehke matam kiya
    Jin la-enon ne ki thi jafa
    Un ki aulad ke darmiyan
    Kaise rehti ho bibi yahan
    Haye haye
 

ہاۓ
جب میں بی بی سکینہؑ کے روضے پہ تھا
دیکھ کر ان کے روضہ کو دل نے کہا
کل یہ روضہ ہی بی بی کا زندان تھا
دیکھا روضہ تو ماضی میں میں کھو گیا
سامنے میرے زندان تھا شام کا
اس گھڑی میرے لب پر فغاں آگئ

روشنی کا سفر بھی نہیں
اور ہوا کا گزر بھی نہیں
کس قدر حبس ہے المہ
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں

تم کو یاد پدر سونے دیتی نہں
اور اس پہ ستم ہے یہ خوفِ لعیں
ضبط غم ایک آزار ہے
سانس لینا بھی دشوار ہے
تم تو تم قید ہے سسکیاں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں

زخم کھاتی اور اشک پیتی ہو تم
مجھ کو حیرت ہے کس طرح جیتی ہو تم
تازیانے دوا بن گۓ
یا اندھیرے شفا بن گۓ
قید میں ایسا ممکن کہاں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں

میری بی بی مجسّم فغاں ہوگئ
کیا خطا تھی کہ قیدی یہاں ہوگئ
کمسنی میں یتیمی ملی
گھر سے نکلی اسیری ملی
سن رہا ہوں یہ کہتی ہے ماں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں

فطرت ساری باتیں مجھے ہیں خبر
قید میں قیدی کو یاد آتا ہے گھر
پھول بن کے چمن میں رہیں
کتنے ناز و سے گھر میں پلیں
اب یہ غم یہ ستم سختیاں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں

شام کی عورتوں سے سنا ہے یہی
تم جو روتی ہو سوتا نہیں ہے شقی
مارتا ہے وہ سجاد کو
سہہ کے سجاد افتاد کو
کرتے رہتے ہیں بس یہ فغاں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں

دل پہ کوہ گراں ایک احساس ہے
چھوٹے بچے تو ڈرتے ہیں تنہائ سے
ہر گھڑی پہرہ داروں کا ڈر
ساتھ کوئ نہیں نوحہ گر
نہ پدر نہ چچا اور نہ ماں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں

تم جو اہل حرم سے جدا قید ہو
پھر تو حق ہے تمہارا کہ نوحہ کرو
ہاۓ قسمت یہ نہ ہو سکا
حکم ظالم سے تجھ کو ملا
نوحہ خوانی پہ پابندیاں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں

آئ کانوں میں یہ قیدیوں کی فغاں
رو کے کہتی ہیں زنداں میں کچھ بی بیاں
ہم یہ کہہ کہہ کہ ماتم کریں
اس یتیماں کو زنداں میں
پرسہ دیتی ہیں تنہائياں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں

پھر تسلسل تصور کا ٹوٹا میرا
میرے پیش نظر روضہ بی بی کا تھا
ہاتھ مصروف ماتم ہوۓ
اشک آنکھوں سے گرنے لگے
پھر بھی ہونٹوں پہ تھی یہ فغاں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں

لفظ مظہر کے احساس فرحان کر
وہ یہ کہتا ہے بی بی سے میں نے کہا
میں نے یہ کہہ کہ ماتم کیا
جن لعینوں نے کی تھی جفا
ان کی اولاد کے درمیاں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں
کیسے رہتی ہو بی بی یہاں