Jahan bhi pani o mashk o alam ki baat chali
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Ya Abbas ya Abbas !!

Jab hawaon may nami mehsoos ki abbas ne,
Ehtiyatan saans rok li abbas ne
Mauj-e-kausar sar uthakar dekhti hi reh gayi,
Itni unchayi par rakh di tashnagi abbas ne

1. Saja rakhi thi darya par ajab baarat pani ki,
Bahut karte thay ashrare yazidi baat pani ki
Magar darya pe pahunchay thokare maari chale aaye,
Bata di hazrat-e-abbas ne aukhaad pani ki
Kate baazu chidi mashkeeza bachi reh gayi pyaasi,
Zameen pe khoon bankar hogayi barsaat pani ki
Ya Abbas, Ya abbas

2. Jahan bhi pani-o-mask-o-alam ki baat chali,
Ali ke laal ke qadmo tale faraad chali
Wafa-e-ishq-o-mohabbat ki kaayanat chali,
Dua-e-fatima zehra bhi saat saat chali
Alam ke dam se hai ab tak hayaat pani ki,
Jari ki jeet hui aur maath pani ki
Ya Abbas, Ya Abbas

3. Wo ek mashk jo kausar samayt kar nikli,
Labon pe apne samandar samayt kar nikli
Tabassum-e-ali asghar samayt kar nikli,
Jo ek zarb se laskhar samayt kar nikli
Agar na kehti ye aab-e-hayaat pani ki,
Har ek nigaah se gir jaati zaat pani ki
Ya Abbas, Ya Abbas

4. Sakina bibi ke sadkhe ali ke laal salaam,
Jari shaki asad-e-sher-e-zuljalaal salaam
Wafa ki aakhri hadke mahay kamaal salaam,
Nahi hai dono jahaan may teri misaal salaam
Tere kate hue baazu nijaat pani ki,
Tere badan ka pasina zakaat pani ki
Ya Abbas, Ya Abbas

5. Himaayat-e-shah-e-mazloom may panaah abbas,
Sabaat-o-jurrat-o-ghairat ki inteha abbas
Janaab-e-zainab-e-bekas ka aasra abbas,
Lab-e-faraath fakadh tune ye likha abbas
Hamari tashnalabi hai faraath pani ki,
Hayaat pyason ki thairi wafaath pani ki
Ya Abbas, Ya Abbas

6. Meri hayat ka samaan nasir-e-shabbir,
Badalta rehta hai jo kaayanat ki taqdeer
Faraath-o-mashq-o-alam jiski hashr tak jaageer,
Mai aur ye meri tanzeem iske dar ke fakheer
Bahegi chasm-e-aza se faraath pani ki,
Chalegi majlis-o-matam may baat pani ki
Ya Abbas, Ya Abbas

جب ہوائوں میں نمی محسوس کی عباسؑ نے
احتیاطاً سانس اپنی روک لی عباسؑ نے

موجِ کوثر سر اٹھا کر دیکھتی ہی رہ گئی
اتنی اونچائی پہ رکھ دی تشنگی عباسؑ نے
یا عباسؑ یا عباسؑ

سجا رکھی تھی دریا پر عجب بارات پانی کی
بہت کرتے تھے عشرارِ یزیدی بات پانی کی
مگر دریا پہ پہنچےٹھوکریں ماریں چلے آئے
بتادی حضرتِ عباسؑ نے اوقات پانی کی

کٹے بازو چھدی مشکیزہ بچی رہ گئی پیاسی
زمیں پہ خون بن کر ہو گئی برسات پانی کی

جہاں بھی پانی و مشک و علم کی بات چلی
علی کے لعل کے قدموں تلے فرات چلی
وفائے عشق و محبت کی کائنات چلی
دعائے فاطمہ زہراؑ بھی ساتھ ساتھ چلی

علم کے دم سے ہے اب تک حیات پانی کی
جری کی جیت ہوئی اور مات پانی کی

وہ ایک مشک جو کوثر سمیٹ کر نکلی
لبوں پہ اپنے سمندر سمیٹ کر نکلی
تبسّم علی اصغرؑ سمیٹ کر نکلی
وہ ایک ضرب سے لشکر سمیٹ کر نکلی

اگر نہ کہتی یہ آبِ حیات پانی کی
ہر اِک نگاہ سے گر جاتی ذات پانی کی

سکینہؑ بی بی کے سقّے علیؑ کے لعل سلام
جری سخی اسد شیرِ ذُوالجلال سلام
وفا کی آخری حد کے مہہِ کمال سلام
نہیں ہے دونوں جہاں میں تیری مثال سلام

تیرے کٹے ہوئے بازو نجات پانی کی
تیرے بدن کا پسینہ زکواۃ پانی کی

حمایتِ شہِ مظلوم میں فنا عباسؑ
ثبات و جرت و غیرت کی انتہا عباسؑ
جنابِ زینبِؑ بیکس کا آسرا عباسؑ
لبِ فرات فقط تو نے یہ لکھا عباسؑ

ہماری تشنہ لبی ہے فرات پانی کی
حیات پیاسوں کی ٹھری وفات پانی کی

میری حیات کا سامان ناصرِ شبیرؑ
بدلتا رہتا ہے جو کائنات کی تقدیر
فرات و مشک و علم جس کی حشر تک جاگیر
میں اور یہ میری تنظیم اُس کے در کے فقیر

بہے گی چشمِ عزا سے فرات پانی کی
چلے گی مجلس وماتم میں بات پانی کی