Mola haq Imam Ya Hasan(a.s.) Ya Hussain(a.s.)
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Ya Hussain Ya Hussain
Maula Haq Imam, Ya Hasan Ya Hussain
Ya Hussain Ya Hussain

1. Wo Abide Bimar Tha, Chalne Se Jo Lachaar Tha
Aur Shaam Ka Baazar Tha, Aur Murtaza Ki Betiyan

2. Shabbir Ki Woh Laadli, Seene Pe Jo Shah Ke Pali
Jis Ki Aba Ran Mein Jali, Mu Par Tamacho Ke Nishan

3. Wo Asghare Besheer Tha, Aur Hurmula Ka Teer Tha
Pyaasa Gala Kyu Kar Chida, Larzi Zameen Aur Aasman

4. Pyaase Gale Khanjar Chale, Chaadar Chini Dure Lage
Abbas Ke Parcham Tale, Ro Kar Kahe Ye Bibiya

5. Ro Kar Kahe Qasim Ki Ma, Maara Geya Qasim Jawan
Aye Lal Mein Dhundu Kahan, Mehendi Teri Sehra Tera

6. Shaame Ghariba Cha Geyi, Abid Ko Ghairat Kha Geyi
Pehre Pe Zainab Aa Geyi, Abbas Aur Akbar Kahan

7. Wo Bawafa Abbas Tha, Dukhiyo Ki Jo Ek Aas Tha
Pani Mila Par Na Piya, Pyasi Rahi Shehazadiya

8. Wo Bawafa Abbas Tha, Toote Dilo Ki Aas Tha
Pani Liya Par Na Piya, Masooma Ka Ehsaas Tha

9. Ek Abide Beemar Tha, Muddat Se Jo Beemar Tha
Aur Tauq Ka Azaar Tha, Aur Pao Mein Thi Bediya

11. Vo Zainabo Kulsoom thi, Chadar Se Jo Mehroom thi
Na Mahramo ke darmiya, Roti Rahi Shehzadiya

12. Chey Mah ka besheer tha, Aur Hurmula ka teer tha
Pyasa gala kyu kar kata, Ro kar kahe ye bibiya

13. Sughra Udhar roti rahi, Moula idhar roote rahe
Aur khatl sab hote rahe, Phir bhi kare shukre khuda

یا حسینؑ یا حسینؑ
مولا حق امام , یا حسنؑ یا حسینؑ
یا حسینؑ یا حسینؑ

------------------------------
وہ عابدِؑ بیمار تھا , چلنے سے جو لاچار تھا
اور شام کا بازار تھا , اور مصطفیٰ کی بیٹیاں

شامِ غریباں چھا گئی , عابدؑ کو غیرت کھا گئی
پہرے پہ زینبؑ آ گئی , عبّاسؑ اور اکبرؑ کہاں

وہ اصغرِؑ بے شیر تھا , اور حُرملہ کا تیر تھا
پیاسا گلہ کیوں کر چھدا , لرزی زمین اور آسماں

وہ اکبرِؑ کڑیل جواں ، سینے پہ جو کھا کر سِناں
رن سے چلے سوئے جِناں ، خیموں میں تھی آہ و بُکا

شببرؑ کی وہ لاڈلی , سینے پہ جو شاہ کے پلی
جس کی عبا بن میں جلی , منہ پر تمانچوں کے نشان

رو کر کہے قاسمؑ کی ماں , مارا گیا قاسمؑ جواں
اے لعل میں ڈھونڈوں کہاں , مہندی تیری سہرا تیرا

وہ باوفا عبّاسؑ تھا , ٹوٹے دلوں کی آس تھا
پانی لیا پر نہ پیا , معصومہؑ کا احساس تھا

پیاسے گلے خنجر چلے , چادر چھنی درے لگے
عباسؑ کے پرچم تلے , رو کر کہیں یہ بیبیاں

زینبؑ کے دونوں لاڈلے ، دریا پہ جو مارے گئے
خیمے میں جو لاسے گئے ، ماں نے کیا شکرِ خدا

وہ زینبؑ و کلثومؑ تھیں , چادر سے جو محروم تھیں
نا محرموں کے درمیاں , روتی رہیں سیدانیاں

صغراؑ اُدھر روتی رہی , مولا اِدھر روتے رہے
اور قتل سب ہوتے رہے , پھر بھی کرے شکرِ خدا

زہراؑ کا جو ہئے لعل تھا، جنت کا وہ سردار تھا
سجدے میں جو مارا گیا، تھرا اٹھے ارض و سما

وہ مصطفیٰ کی آل تھی، کربل میں جو کہ لٹ گئی
بادِ خزاں ایسی چلی، مارے گئے پیر و جواں

چاروں طرف بے پیر ہیں، یہ وارثِ تطہیر ہیں
ہوئی قید بے تقصیر ہیں، روتی رہیں شہزادیاں

------------------------------
حسنینؑ کا وہ لاڈلا ، گھوڑوں سے جو پامال تھا
اِک رات کو دولہا بنا ، ہاتھوں میں مہندی کے نشاں

وہ باوفا عبّاسؑ تھا , دکھیا دِلوں کی آس تھا
پانی ملا پر نہ پیا , پیاسی رہیں شہزادیاں

وہ حضرتِ عباسؑ تھے، لشکر کے جو سالار تھے
دریا پہ جو مارے گئے، پیاسی رہیں سب بیبیاں

وہ جو ستم سہتا رہا ، پیروں سے خوں بہتا رہا
رو رہ کے جو کہتا رہا ، ظلم و ستم کی داستاں

چھ ماہ کا بے شیر تھا , اور حُرملہ کا تیر تھا
تیرِ ستم مارا گیا , رو کر کہے اصغرؑ کی ماں