Aabad hui karbobala ujra Madina barbaad hui mein
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Aabad hui Karbobala ujra Madina barbaad hui mein (x4)
Zainab(s.a.) ko na raas aaya Muharram ka mahina Barbaad hui mein

Aabad hui karbobala ujra Madina barbaad hui mein (x2)

1. Ek din tha keh is shaher ki kerti thi mein Shahi…Aur aaj tabahee (x2)
   Bay ghusl parra mohr-e-Nabuwat(SAW) ka nagheena..Barbaad hui mein
   Aabad hui karbobala ujra Madina barbaad hui mein (x2)

2. Kis Laash pay rouoon kissay chouroon mein Biradar…Laashein hain Bahattar (x2)
   Had yeh hai keh ronay ki ijazat bhi mille na....Barbaad hui mein
   Aabad hui karbobala ujra Madina barbaad hui mein (x2)

3. Asghar(a.s.) ka galla, bhai ka Sar, sina-e-Akbar(a.s.)…Sab Gohar-o-Chadar (x2)
   Is dasht mein loota gaya Zainab(s.a.) ka Khazeena..Barbaad hui mein
   Aabad hui karbobala ujra Madina barbaad hui mein (x2)

4. Maayein bhi na pehchaan sakein bachoon kay chehray…Bikhray howay sehray (x2)
   Hai khoon kay derya mein gareeboon ka Safeena..Barbaad hui mein
   Aabad hui karbobala ujra Madina barbaad hui mein (x2)

5. Ek aag hai khaimoon mein qayamat ka samaan hai…Ghazi(a.s.) tu kahan Hai (x2)
   Daykho to rida cheen gaya shimr(la) kameena..Barbaad hui mein
   Aabad hui karbobala ujra Madina barbaad hui mein (x2)

6. Chadar chini dur lay liye ab zulm na dhaoo…Baba say millao (x2)
   Nayzay kay tallay bayth kay roti hai Sakina(s.a.)..Barbaad hui mein
   Aabad hui karbobala ujra Madina barbaad hui mein (x2)

7. Paband rasan Bibiyian bazaar kholay ser…Her moar pay pathhar (x2)
   Masoom yateemoon ka baha surkh paseena..Barbaad hui mein
   Aabad hui karbobala ujra Madina barbaad hui mein (x2)

8. Shaukat sar-e-maqtal yeh kaha Bint-e-Ali(s.a.) nay…Zehra(s.a.) ki palli nay (x2)
   Bhayyia tayray bin khak tayri behna ka jeena..Barbaad hui mein
   Aabad hui karbobala ujra Madina barbaad hui mein (x2)

آباد ہوئی کرب وبلا اُجڑا مدینہ برباد ہوئی میں
زینب کو نہ راس آیا محرم کا مہینہ برباد ہوئی میں

اک دن تھا کہ اس شہر کی میں کرتی تھی شاہی ، اور آج تباہی
بے غسل پڑا مہرِ نبوت کا نگینہ ،برباد ہوئی میں
آباد ہوئی کرب وبلا۔۔۔۔

۲۷کس لاش پہ روئوں کسے چھوڑوں میں برادر،لاشے ہیں بہتر
حدیہ ہے کہ رونے کی اجازت بھی ملی نہ،برباد ہوئی میں
آباد ہوئی کرب وبلا۔۔۔۔

اصغر کا گلا بھائی کا سر سینہئ اکبر،سب گوہر و چادر
اِس دشت میں لُوٹا گیا زینب کا خزینہ،برباد ہوئی میں
آباد ہوئی کرب وبلا۔۔۔۔

مائیں بھی نہ پہچان سکیں بچوں کے چہرے،بکھرے ہوئے سہرے
ہے خون کے دریا میں غریبوں کا سفینہ،برباد ہوئی میں
آباد ہوئی کرب وبلا۔۔۔۔

اک آگ ہے خیموں میں قیامت کا سمائ ہے،غازی تُو کہاں ہے
دیکھو تو ردا چھین گیا شمر کمینہ،برباد ہوئی میں
آباد ہوئی کرب وبلا۔۔۔۔

چادرچھینی دُرلے لیئے اب ظلم نہ ڈھائو، بابا سے ملائو
نیزے کے تلے بیٹھ کے روتی ہے سکینہ،برباد ہوئی میں
آباد ہوئی کرب وبلا۔۔۔۔

پابندِرسن بیبیاں بازار کھولے سر ، ہر موڑ پہ پتھر
معصوم یتیموںکا بہا سرخ پسینہ،برباد ہوئی میں
آباد ہوئی کرب وبلا۔۔۔۔

شوکت سرِ مقتل یہ کہا بنتِ علی نے،زہرا کی پلی نے
بھیا تیرے بن خاک تیری بہنہ کا جینہ،برباد ہوئی میں
آباد ہوئی کرب وبلا۔۔۔۔