Pukari Zainab(s.a.) ghareeb ro ro yateem kehtay hain log ham ko
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Pukari Zainab ghareeb ro ro yateem kahte hain log humko
Batao Ya Murtuza kahan ho yateem kahte hain log humko

1. Na gham mein itna rulao Baba sada tum apni sunao Baba
   Kahan sidharey ho aao Baba yateem kahte hain log humko

2. Pacharein khatey  hain Bhai Shabbar, Hussain rotey hain sir patak kar
   Malein na kis tarha khaak mooh per yateem kahte hain log humko

3. Sitam hai Ya Bu-Turab kaisa hua hai jeena azaab kaisa
   Diya hai tumne khitaab kaisa yateem kahte hain log humko

4. Nikal ke turbat se aao Amma hamein galey se lagao Amma
   Kahan hai Baba batao Amma yateem kahte hain log humko

5. Jahan mein ab ji ke kya karein hum falak ka kin se gila karein hum
   Kaho kahan tak suna karein hum yateem kahte hain log humko

6. Na ibne muljim ne rahm khaya sitam ka teigh tumhe lagaya
   Utha hai jabse tumhara saya yateem kahte hain log humko

7. Ab aao Sher-e-Khuda kahan ho batao Ya Murtuza kahan ho
   Suno to ya Murtuza kahan ho yateem kahte hain log humko

8. Ajal ne Nana se bhi churaya raha na Maa Baap ka bhi saya
   Hum aaj kis se kahein Khudaya yateem kahte hain log humko

پکاری زینبؑ غریب رو رو، یتیم کہتے ہیں لوگ ہم کو
بتاؤ یا مرتضیٰؑ کہاں ہو،  یتیم کہتے ہیں لوگ ہم کو

نہ غم میں اتنا رلاؤ بابا، صدا تم اپنی سناؤ بابا
کہاں سدھارے ہو آؤ بابا،  یتیم کہتے ہیں لوگ ہم کو

پچھاڑیں کھاتے ہیں بھائی شبّرؑ، حسینؑ روتے ہیں سر پٹک کر
مَلیں نہ کس طرح خاک منہ پر،  یتیم کہتے ہیں لوگ ہم کو

ستم ہے یا بوترابؑ کیسا، ہوا ہے جینا عزاب کیسا
دیا ہے تم نے خطاب کیسا،  یتیم کہتے ہیں لوگ ہم کو

نکل کے تربت سے آؤ اماں، ہمیں گلے سے لگاؤ اماں
کہاں ہیں بابا بتاؤ اماں،  یتیم کہتے ہیں لوگ ہم کو

جہاں میں اب جی کے کیا کریں ہم، فلک کا کن سے گلہ کریں ہم
کہو کہاں تک سُنا کریں ہم،  یتیم کہتے ہیں لوگ ہم کو

نہ ابنِ ملجم نے رحم کھایا، ستم کا تیغ تمہیں لگایا
اٹھا ہے جب سے تمہارا سایہ،  یتیم کہتے ہیں لوگ ہم کو

اب آؤ شیرِ خدا کہاں ہو، بتاؤ یا مرتضیٰؑ کہاں ہو
سنو تو یا مرتضیٰؑ کہاں ہو،  یتیم کہتے ہیں لوگ ہم کو

اجل نے نانا سے بھی چھڑایا، رہا نہ ماں باپ کا بھی سایہ
ہم آج کس سے کہیں خدایا،  یتیم کہتے ہیں لوگ ہم کو