Aa gayee binte Ali be rida hath bandhay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Aa gayee binte Ali, berida haath bandhe bhare bazaaron may
Jiss ne sooraj nah kabhi dekha tha, ro rahee hay voh gunahgaron may

1) Kaun jaanay ke yeh hay kaun, rassan pehne hooe
Berida rotee hai sajjad ke peeche chup ke
Siskiyanh doobi hainh jiss Bibi kee
Hae zanjeero kee jhankaron meinh

2) Hae Zahra teri kismet nah millah Haqq tujh ko
Aisee tazim teri ki hai mussalmanonh ne
Tera Haqq mangne aayee Zainab
Ek menosh ke darrbaronh meinh

3) Kahan Zainab aur kahan shaam ke logonh ka hajoom
Sarr barehana oonchee avaaz mainh khutbe parhna
Qatlay murrsal ka havaala de karr
Chadare Mangna badhkaronh mein

4) Aag Khaymonh ko Luggee aur thay Sajjad be hosh
Roro Abbas ko deti thihsadaen Zainab
loot lo chadare Sayyedaniyyonh kee
Shor barpa tha sitamgaronh meinh

5) Jiss tarha bali Sakina rahe Baba ke beghair
Sogayyi chaen se tanhhaee meinh rote rote
Hitchkiyyanh dabb gayyee Massooma kee
Hae zindano ke deevaronh meinh

6) Jiss jagga Majlis-e-Shabbir ho barpa Akhtar
Chhorr Karr dukhiyya vahanh rotee hai Zahra aa Karr
Baal Kholay hooeh saar peet ti hai
Apne pyaaronh ke Azadaaronh meinh

آگئی بنتِ علیؑ بے ردا ہاتھ بندھے بھرے بازاروں میں
جس نے سورج نہ کبھی دیکھا تھا رو رہی ہے وہ گناہگاروں میں

کون جانے کہ یہ ہیں کون رسن پہنے ہوئے
بے ردا روتی ہے سجادؑ کے پیچھے چھپ کے
سسکیاں ڈوبی ہیں جِس بی بی کی
ہائے زنجیر کی جھنکاروں میں

ہائے زہراؑ تیری قسمت نہ ملا حق تجھ کو
ایسی تعظیم تیری کی ہے مسلمانوں نے
تیرا حق مانگنے آئی زینبؑ
ایک مے نوش کے درباروں میں

کہاں زینبؑ اور کہاں شام میں لوگوں کا ہجوم
سر برہنہ اُونچی آواز میں خطبے پڑھنا
ذکرِ مرسل کا حوالہ دے کر
چادریں مانگنا بدکاروں میں

آگ خیموں کو لگی اور تھے سجادؑ بے ہوش ر
و رو عبّاس کو دیتی تھی صدائیں زینبؑ
لُوٹ لو چادریں سیدانیوںؑ ک
ی شور برپا تھا ستمگاروں میں

کِس طرح بالی سکینہؑ آج بابا کے بغیر
سوگئی چین سے تنہائی میں روتے روتے
ہچکیاں دب گئیں معصومہؑ کی
ہائے زندان کی دیواروں میں

جِس جگہ مجلسِ شبیرؑ ہو برپا اختر
چھوڑ کر بقیہ وہاں روتی ہے زہراؑ آ کے
بال کھولے ہوئے سر پیٹتی ہے
اپنے پیاروں کے عزاداروں میں