Yun aalam e ghurbat may Ya Rab na lutay koi
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

یوں عالمِ غربت میں یارب نہ لٹے کوئی
دریا کے قریب آ کر پیاسا نہ رہے کوئی

اکبرؑ کی جوانی پر خود روئی جوانی بھی
ارمان کسی ماں کے دل میں نہ رہے کوئی

یہ کہہ کے گری زینبؑ شبیرؑ کے لاشے پر
بے گور و کفن لاشہ بن میں نہ رہے کوئی

کٹتی ہوئی گردن سے آتی تھی صدا پیہم
یوں پیاسے کی گردن پر خنجر نہ چلے کوئی

بازار میں کوفے کے زینبؑ نے دعا مانگی
یوں پردہ نشیں یارب در در نہ پھرے کوئی

Yun aalam-e-ghurbat may Ya Rab na lutay koi
Darya ke qareeb aa kar pyasa na rahay koi

Akbar ki jawani par khud roye jawani bhi
Arman kisi maa ke dil may na rahay koi

Yeh keh ke giri Zainab Shabbir kay lashay par
Be gor-o-kafan lasha ban may na rahay koi

Kat-ti hui gardan se aati thi sada paiham
Yun pyasay ki gardan par khanjar na chalay koi

Bazar may Kufay kay Zainab ne kaha ro kar
Yun parda nasheen ya Rab dar dar na phiray koi