Aey Musalma kash socha hota
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Aey muslaman kash socha hota
ke Muhammad(sawaw) ka nawasa hay yeh
Halat-e-sajda main hay bay kas or majbor bhi hay
aur kaye roz ka pyasa hay yeh

1. Aqal haeran thi isay banda ke RAHMAN kahain
Nokay nayza pay isay bolta Quran kahain
Ya to Rab hay jo k bandy sa nazar aata hay
Gar hay insan to Khuda sa hay yeh

2. Boli Zainab(s.a.) zulm Shabeer(a.s.) pay dhanay walo
Pathroo kay talay mayyat ko chupanay walo
Haey kandhay pay uthaty thay jisy khatm e Rasul
Meray us bhai ka lasha hay yeh

3. Jis ka Ghazi(a.s.) na raha or Ali Akbar(a.s.) na bacha
Bhai ki lash pay jisay khul ke ronay na diya
Aaj matam sar e bazar jo hum karty hain
Isi Zainab(s.a.) ka dilasa hay yeh

4. Syedon ka bhara ghar bar jalaya kyun hay
Bibio ko bhary bazar pihraiya kyun hay
Tu nay to yea bhi na socha ke jo qaidi hain banay
Pak Zehra(s.a.) ka asasa hay yeh

5. May hoon Zainab mujhe Haider tu samajhta kyun hay
Sun ke khutba mera maloon bigarta kyun hay
Boli Zainab ke yeh khutba hi nahi sun aey Yazeed
Pak Quraan ka khulasa hay yeh

6. Sani-e-Zehra ki Akhtar yeh ata hay tujh ko
Noha likhnay ke liye dard mila hay tujh ko
Teray alfaz may hay Fatima Zehra ki dua
Tera andaz juda sa hay yeh

اے مسلماں کاش سوچا ہوتا
کہ محمد کا نواسہ ہے یہ
حالت سجدہ میں ہے بے کس و مجبور بھی ہے
اور کئی روز کا پیاسا ہے یہ

عقل حیراں تھی اسے بندہ کہ رحمان کہیں
نوک نیزہ پہ اسے بولتا قرآن کہیں
یا تو رب ہے جو کہ بندے سا نظر آتا ہے
گر ہے انسان تو خدا سا ہے یہ

بولی زینبؑ ظلم شبیر ؑ پہ ڈھانے والو
پتھروں کے تلے میت کو چھپالے والو
ہائے کاندھے پہ اٹھاتے تھے جنہیں ختم رسل
میرے اس بھائی کا لاشہ ہے یہ

جس کا غازی ؑ نہ رہا اور علی اکبرؑ نہ رہا
بھائی کی لاش پہ کھل کر جسے رونے نہ دیا
آج ماتم سر بازار جو ہم کرتے ہیں
اِسی زینب ؑ کا دلاسہ ہے یہ

سیدوں کا بھرا گھر بار جلایا کیوں ہے
بیبیوں کو بھرے بازار پھرایا کیوں ہے
تو نے یہ بھی نہ سوچا کہ جو قیدی ہیں بنے
پاک زیراؑ کا اساسہ ہے یہ

میں ہوں زینبؑ مجھے حیدرؑ تو سمجھتا کیوں ہے
سن کے خطبہ میرا ملعون بگڑتا کیوں ہے
بولی زینبؑ کہ یہ خطبہ ہی نہیں سن اے یزید
پاک قرآں کا خلاصہ ہے یہ

ثانیءِ زہراؑ کی اختر یہ عطا ہے تجھ کو
نوحہ لکھنے کے لئے درد ملا ہے تجھ کو
تیرے الفاظ میں یہ فاطمہ زیراؑ کی دعا
تیرا انداز جدا سا ہے یہ