Chanay lagi sham e gharibaan haey qayamat ka hay samaa
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Haey qayamat ka hay samaa (x3)
Chanay lagi sham-e-gharibaan

Khaima-e-Sadat se uth duwan
Haey qayamat ka hay samaa

1) Dhal gaya din khatm larayi hui, moat ki khamoshi hay chayi hui
   Chak gareban khudai hui, khak basar Fatima jayi hui
   Larzi zameen kanp uth aasman, haey qayamat ka hay samaa
   Chanay lagi sham-e-gharibaan, haey qayamat ka hay samaa

2) Noor-e-nazar raj dularay gaye, Zainab-e-dilgeer ke pyaray gaye
   Shah kay ansar bhi maray gayey, Aaj hi woh dilbar saray gaye
   Dhoond liya moat nay yeh karwan, haey qayamat ka hay samaa
   Chanay lagi sham-e-gharibaan, haey qayamat ka hay samaa

3) Khoon may hay tar sher-e-jari ka alam, ho gaya Shabbir ka sar bhi qalam
   Khushyan mananay lagi foaj-e-sitam, gham ka tabah haal hay haal-e-haram
   Lut gayeen konain ki shehzadian, haey qayamat ka hay samaa
   Chanay lagi sham-e-gharibaan, haey qayamat ka hay samaa

4) Aun-o-Mohammad nahi Akbar nahi, Sarwar-o-Abbas-e-Dilawar nahi
   Haey koi moonis-o-yawar nahi, khaimay may to maqna-o-chadar nahi
   Dasht may aal-e-nabhi hay be amaan, haey qayamat ka hay samaa
   Chanay lagi sham-e-gharibaan, haey qayamat ka hay samaa

5) Madar-e-Akbar ka ajab haal hay, deta hay jab koi tassali usay
   Kehti hay dil tham ke aatay huay, kho gaye is ban may saharay meray
   Mar gaya haey mera karyal jawan, haey qayamat ka hay samaa

6) Maan hun har ik dard uthaoon gi may, rotay huay khud chali jaoon gi may
   Dhond kay besheer ko laoon gi may, uskay bina jee nahi paoon gi may
   Reh gaya haey mera bacha kahan, haey qayamat ka hay samaa
   Chanay lagi sham-e-gharibaan, haey qayamat ka hay samaa

7) Haey yeh be chargi yeh bay kasi, deta nahi usko dilasa koi
   Darmiyan lashon kay akailay khari, kehti hay bachchi koi sehmi hui
   Dhoondnay jaoon tumhain baba kahan, haey qayamat ka hay samaa
   Chanay lagi sham-e-gharibaan, haey qayamat ka hay samaa

ہاۓ قیامت کا ہے سماں
چھانے لگی شام غریباں

ہاۓ قیامت کا ہے سماں
ہاۓ قیامت کا ہے سماں

خیمہ سادات سے اٹھا دھواں
ہاۓ قیامت کا ہے سماں

ڈھل گیا دن ختم لڑائی ہوئی
موت کی خاموشی ہے چھائی ہوئی
چاک گریبان خدائی ہوئی
خاک بسر فاطمہؑ جائی ہوئی
لرزی زمیں کانپ اٹھا آسماں

نور نظر راج دلارے گۓ
زینبِؑ دلگیر کے پیارے گۓ
شاہ کے انصار بھی مارے گۓ
ناز تھا جن پر وہ سہارے گۓ
ڈھونڈ لیا موت نے یہ کارواں

خوں میں ہے تر شیرِ جری کا علم
ہوگيا شبیرؑ کا سر بھی قلم
خوشیاں منانے لگی فوجِ ستم
غم سے تباہ حال ہیں اہل حرم
لٹ گئ کونین کی شہزادیاں

عونؑ و محمدؑ نہیں اکبرؑ نہیں
سرورؑ و عباسِؑ دلاور نہیں
ہاۓ کوئ مونس و یاور نہیں
خیمے نہیں مقنع و چادر نہیں
دشت میں ہیں آل نبیؑ بے اماں

مادرِ اکبرؑ کا عجب حال ہے
دیتا ہے جب کوئ تسلی اسے
کہتی ہے دل تھام کے روتے ہوۓ
کھو گۓ اس بن میں سہارے میرے
مرگیا ہاۓ میرا کڑیل جواں

ماں ہوں ہر اِک رنج اٹھاؤں گی میں
روتے ہوۓ خود چلی جاؤں گی میں
ڈھونڈ کے بے شیر کو لاؤں گی میں
اس کے بِنا جی نہیں پاؤں گی میں
رہ گيا ہاۓ میرا بچہ کہاں

ہاۓ یہ بیچارگی یہ بے کسی
دیتا نہیں اِس کو دلاسہ کوئی
درمیاں لاشوں کے اکیلے کھڑی
کہتی ہے بچی کوئ سہمی ہوئی
ڈھونڈنے جاؤں تمہیں بابا کہاں

خیمہ سادات سے اٹھا دھواں
ہاۓ قیامت کا ہے سماں