Jabhi to sahil pe alqama ke kisi ki mayyat tarap rahi hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

یہ شام عاشور کا ہے منظر
ہے کرب میں عترت پیمبر
جبھی تو ساحل پہ علقمہ کے
کسی کی میت تڑپ رہی ہے

یہ کوئی محو بکا ہے شاید
کسی نے عمو کہا ہے شاید
بڑھا ہے شاید کوئی ستمگر
جبھی تو ساحل پہ علقمہ کے
کسی کی میت تڑپ رہی ہے

وہ بھولی بھالی سی ایک بچی
نجف کی جانب جو تک رہی تھی
کسی نے چھینے ہیں اِس کے گوہر
جبھی تو ساحل پہ علقمہ کے
کسی کی میت تڑپ رہی ہے

عطش سے بچے مچل رہے ہیں
یہ پھول شعلوں میں جل رہے ہیں
چمن میں کملا گئے گل تر
جبھی تو ساحل پہ علقمہ کے
کسی کی میت تڑپ رہی ہے

ہجوم غم سے جو نیم جاں ہے
وہی جو بیمار ناتواں ہے
کسی نے کھینچا ہے اس کا بستر
جبھی تو ساحل پہ علقمہ کے
کسی کی میت تڑپ رہی ہے

رہی جو کوفے کی شاہزادی
کسی نے شاید اُسے صدا دی
چھنی ہے گوہر اب اُس کی چادر
جبھی تو ساحل پہ علقمہ کے
کسی کی میت تڑپ رہی ہے

Ye sham e ashoor ka hay manzar
Hay karb main itrat e payambar
Jabhi to sahil pe alqama ke
kisi ki mayyat tarap rahi hay

1) Ye koi mehve buka hay shayad
Kisi nay ammu kaha hay shayad
Barha hay shayad koi sitamgar
Jabhi to sahil pe alqama ke
kisi ki mayyat tarap rahi hay

2) Wo bholi bhali si aik bacchi
Najaf ki janib jo tak rahi thi
Kisi nay cheeney hain us ke gohar
Jabhi to sahil pe alqama ke
kisi ki mayyat tarap rahi hay

3) Atash say bacchay machal rahay hayn
Ye phool sholon main jal rahay hayn
Chaman main kumla gaye gul e tar
Jabhi to sahil pe alqama ke
kisi ki mayyat tarap rahi hay

4) Hujoom e gham say jo neem jan hay
Wohi jo bemaar natawan hay
Kisi nay kheyncha hay uska bistar
Jabhi to sahil pe alqama ke
kisi ki mayyat tarap rahi hay

5) Rahi jo kufay ki shahzadi
Kisi nay shayad usay sada di
Chini hay Kausar ab uski chadar
Jabhi to sahil pe alqama ke
kisi ki mayyat tarap rahi hay