Inna lillah Karbobala aur aale aba
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Inna lilaah

1) Karbobala aur aale aba
   Charon taraf hay fauje jafa
   Darya pa bhi hay pehra laga
   Pyasay hay atfale shaah
   Qalbe fitrat de ye sada
   Inna lilaah

2) Wo garmi wo pyase bache
   Bali Sakina kehti thi sab se
   Ammu gaye hain nehr pay mere
   Maango dua pani aajaye
   Lekin aisa ho na saka
   Inna lilaah

3) Khaali alam jab khaime may aaya
   Boli Sakina kahiye baba
   Reh gaye ammu kya labe darya
   Sarne hurahe shaahe wala
   Keh na sake kuch iske siwa
   Inna lilaah

4) Sunke kalaame Sarware deen
   Saaniye Zehra kehti thi
   Haaye mera Abbas nahi
   Hogaya mujko iska yaqeen
   Jaayegi mere sar se rida
   Inna lilaah

5) Ran ko chalay jab khaime se Akbar
   Zainab aayin khaime ke dar par
   Umme Laila kehti thi ro kar
   Maa se to milne aaoge dilbar
   Sar ko jhuka kar Sheh ne kaha
   Inna lilaah

6) Zere aba ek maahe munawar
   Maidan may laaye hain Sarwar
   Pani maanga ro diya lashkar
   Dast e Sheh par hans parray Asghar
   Gardan may jab teer laga
   Inna lilaah

7) Mohsin may ye sochta hoon
   Pursa bano ko kaise doon
   Behtar hay khamosh rahoon
   Honton se kuch bhi na kahoon
   Aankhon bolay rizan be qaza
   Inna lilaah

اِنّا للہ
کرب و بلا اور آل عبا ، چاروں طرف ہے فوج جفا
دریا پہ بھی ہے پہرہ لگا ، پیاسے ہیں اطفالِ شاہ
قلب فطرت دے یہ صدا
اِنّا للہ

وہ گرمی وہ پیاسے بچے ، بالی سکینہ کہتی تھیں سب سے
عمّو گئے ہیں نہر پہ میرے ، مانگو دعا پانی آجائے
لیکن ایسا ہو نہ سکا
اِنّا للہ

خالی علم جب خیمے میں آیا ، بولی سکینہ کہئے بابا
رہ گئے عمّو کیا لب دریا ، سِرنہوڑائے شاہِ والا
کہہ نہ سکے کچھ اِس کے سوا
اِنّا للہ

سُن کے کلامِ سرورِؑ دیں ، ثانیءِ زہراؑ کہتی تھیں
ہائے میرا عباسؑ نہیں ، ہو گیا مجھ کو اِس کا یقین
جائے گی میرے سر سے ردا
اِنّا للہ

رن کو چلے جب خیمے سے اکبرؑ ، زینبؑ آئیں خیمے کے در پر
امِِّ لیلیٰ کہتی تھیں رو کر ، ماں سے تو ملنے آؤ گے دلبر
سر کو جھکا کر شہہؑ نے کہا
اِنّا للہ

زیرِ عبا اِک ماہِ منّور ، میداں میں لائے ہیں سرورؑ
پانی مانگا رو دیا لشکر ، دستِ شہہؑ پہ ہنس پڑے اصغرؑ
گردن میں جب تیر لگا
اِنّا للہ

محسن میں یہ سوچتا ہوں ، پُرسہ بانوؑ کو کیسے دوں
بہتر ہے خاموش رہوں ، ہونٹوں سے بھی کچھ نہ کہوں
آنکھیں بولیں رضاََ بہ قضا
اِنّا للہ