Jangal pahar kartay hain nad e Ali Ali
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Jangal pahaar karte hain nad-e-Ali Ali
mushkil ko meri hal karo mushkil kusha Ali
Hussain Hussain Hussain

1) Ruksat ko ahlebait-e-nabi may gaye imam 
   Qadmo pe lotne lagi saydaniya tamam
   Wo shor al-firaaq ka wo yaas ke kalaam
   Bache bhi sar patak-te thay le le ke sheh ka naam
   Rotay thay yun to lipte hue sab Hussain se
   Lekin kaleje phat-te thay Zainab ke bain se
   Hussain Hussain Hussain

2) Us waqt tha ajab sheh-e-deen par hoojume yaas
   Dhalna wo do pahar ka woh andhi woh loo woh pyaas
   Laashe paray huay thay azeezon ke aas paas
   Ro kar falak ko dekhtay thay shah-e-haq shanas
   Ut-ta tha darde dil to qadam larkharate thay
   Farma ke ya-Ali-e-wali baith jaatay thay
   Hussain Hussain Hussain

3) Bhai ke sar ko chati se lipta ke ye kaha
   Batlao kya irada hay aey mere mehlaqa
   Daste adab ko joar ke bola wo bawafa
   Pyasi Sakina marti hay ya shah-e-karbala
   Guzre hain teen din yuhin is pusht pak par
   Gar izn ho to pani ko jaoon faraat par
   Hussain Hussain Hussain

4) Yaan charh chuke thay ghore pe Abbas-e-haq shanaas
   Aaye sada bhatiji ki suntay hi dar ke paas
   Boli ye mashq deke Sakina ba dard-o-yaas
   Qurban ammu jaan bujha do hamari pyaas
   Phat-ta hay dil atash se kaleja kabab hay
   saqqai kijiye ke ye kaare sawab hay
   Hussain Hussain Hussain

5) Abbas nay kaha ke mera fakhr hay yeh kaam
   Bibi tumhare baap ka adna hai ye ghulam
   Di tumne aabru mujhay aey dukhtare imam
   Ab hogaya jahan may bahishti hamara naam
   Kausar may samjhu dosh pe gar mashke aab ho
   Tum bhi due karo ke chacha kamiyab ho
   Hussain Hussain Hussain

6) Chaati tak usne pani ko dekha jo ek baar
   Ghoray ka dil hua sifat-e-mauje beqaraar
   Hasrat se moo phira ke nazar ki suye sawaar
   Bole ye baat jor ke Abbase naamdar
   Tu pee lay aey faraz ke bahot tishna-kaam hay
   Ham par to be-Hussain ye pani haram hay
   Hussain Hussain Hussain

7) Bochaar yek-bayak hui teeron ki haey ghazab
   Tayghe chaleen aqab se shareero ki haey ghazab
   Ye shakl do jahan ke ameero ki haey ghazab
   Bujhne na paayi pyaas sagheero ki haey ghazab
   Naize thay aur chand se pehlu dilair ke
   Teero ne chaan dala tha seenay ko sher ke
   Hussain Hussain Hussain

8) Shane se yu ubal ke baha khoon ke al-amaan
   Tiwara ke jhoomne lagay Abbas-e-nowjawan
   Machli ki tarha haath to reti pe tha tapan
   Lekin juda na hoti thi qabzay se ungliyan
   Be dast hogayi thi jo is safdari ke saath
   Talwar bhi tarapti thi daste jari ke saath
   Hussain Hussain Hussain

9) Raste may larkharate thay jab zoef se qadam
   Akbar sambhaal letay thay baba ko dam-ba dam
   Farmate thay tarap ke pisar se shahe-umam
   Jo haal ho baja hay ke bhai ka hay alam
   Bazu pakar ke dilbare Zehra ko le chalo
   Beta chacha ki laash pe baba ko le chalo
   Hussain Hussain Hussain

10) Ghul pargaya ke sheh ke alamdar haey haey
    Aey noore chasme Haidere Karaar haey haey
    Aey ibne Fatima ke madadgar haey haey
    Aey fauje sheh ke jaafare tayyaar haey haey
    Chotay se haath rakh ke dile dard naak par
    De maara sar ko bali Sakina ne khaak par
    Hussain Hussain Hussain

جنگل پہاڑ کرتے ہیں ناد علیؑ علیؑ 
مشکل کو میری حَل کرو مشکل كشاء علیؑ 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

رخصت کو اہلیبیتِ نبیؐ میں گئے امام 
قدموں پہ لُوٹنے لگی سیدانیاں تمام 
وہ شور الفراق کا وہ یاس كے کلام 
بچے بھی سَر پٹکتے تھے لے لے كے شہہؑ کا نام 
روتے تھے یوں تو لِپٹے ہوئے سب حسینؑ سے 
لیکن کلیجے پھٹتے تھے زینبؑ كے بین سے 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

اُس وقت تھا عجب شہہِ دیں پر ہجومِ یاس 
ڈھلنا وہ دو پہر کا وہ آندھی وہ لُو وہ پیاس 
لاشے پڑے ہوئے تھے عزیزوں كے آس پاس 
رو کر فلک کو دیکھتے تھے شاہِ حق شناس 
اٹھتا تھا دردِ دل تو قدم لڑکھڑاتے تھے 
فرما كے یا علیِِؑ ولی بیٹھ جاتے تھے 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

بھائی كے سَر کو چھاتی سے لپٹا كے یہ کہا 
بتلاؤ کیا اِرادہ ہے اے میرے مہ لقا 
دستِ ادب کو جوڑ كے بولا وہ باوفا 
پیاسی سكینہؑ مرتی ہے یا شاہِ کربلا 
گزرے ہیں تِین دن یونہی اِس دشتِ خاک پر 
گر اِذن ہو تو پانی کو جاؤں فرات پر 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

یاں چڑھ چکے تھے گھوڑے پہ عباسِؑ حق شناس 
آئی صدا بھتیجی کی سنتے ہی در كے پاس 
بولی یہ مشک دے کے سكینہؑ با درد و یاس 
قربان عمّو جان بجھا دو ہماری پیاس 
اُبلا ہے دِل عطش سے کلیجہ کباب ہے 
سقائی کیجیے كہ یہ کارِ ثواب ہے 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

عباسؑ نے کہا كہ میرا فخر ہے یہ کام 
بی بی تمھارے باپ کا ادنیٰ ہے یہ غلام 
دی تم نے آبرو مجھے اے دخترِ امام 
اب ہو گیا جہاں میں بہشتی ہمارا نام 
کوثر میں سمجھوں دوش پہ گر مشکِ آب ہو 
تم بھی دعا کرو كہ چچا کامیاب ہو 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

چھاتی تک اُس نے پانی کو دیکھا جو ایک بار 
گھوڑے کا دِل ہوا صفتِ موجِ بے قرار 
حسرت سے منہ پِھرا كے نظر کی سوئے سوار 
بولے یہ باگ چھوڑ كے عباسِؑ نامدار 
تو پی لے اے فرس كے بہت تشنہ کام ہے 
ہَم پر تو بے حسینؑ یہ پانی حرام ہے 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

بَوچھاڑ یک بہ یک ہوئی تیروں کی ہئے غضب 
تیغیں چلیں عَقب سے شریروں کی ہئے غضب 
یہ شکل دو جہاں كے امیروں کی ہئے غضب 
بجھنے نہ پائی پیاس صغیروں کی ہئے غضب 
نیزے تھے اور چاند سے پہلو دلیر كے 
تیروں نے چھان ڈالا تھا سینے کو شیر كے 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

شانے سے یوں اُبل كے بہا خوں كہ الاماں 
تیورا كے جھومنے لگے عباسِؑ نوجواں
مچھلی کی طرح ہاتھ تو ریتی پہ تھا تپاں 
لیکن جدا نا ہوتی تھی قبضے سے انگلیاں 
بے دست ہوگئی تھی جو اِس صفدری كے ساتھ 
تلوار بھی تڑپتی تھی دستِ جری كے ساتھ 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

رستے میں لڑکھڑاتے تھے جب ضعف سے قدم 
اکبرؑ سنبھال لیتے تھے بابا کو دم بہ دم
فرماتے تھے تڑپ كے پسر سے شہہِؑ امم 
جو حال ہو بجا ہے كہ بھائی کا ہے الم 
بازو پکڑ كے دلبرِ زہراؑ کو لے چلو 
بیٹا چچا کی لاش پہ بابا کو لے چلو 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

اکبرؑ سے پِھر کہا كے علمدار کو اٹھاؤ 
پُر خوں یہ مشک خیمہءِ عصمت میں لے كے جاؤ 
بیوہ ہوئی چچی اسے پُرسہ دو خاک اڑاؤ 
بیٹا چچا كے بچوں کو جا کر گلے لگاؤ 
پوچھیں جو سب كہ سبط پیمبرؑ کدھر گئے 
کہہ دیجیو كے بھائی كے لاشے پہ مر گئے
حسینؑ حسینؑ حسینؑ 

غل پڑ گیا كہ شہہؑ كے علمدار ہائے ہائے 
اے نور چشم حیدرِ کرار ہائے ہائے 
اے ابن فاطمہؑ كے مددگار ہائے ہائے 
اے فوجِ شہہؑ كے جعفرِ تیارؑ ہائے ہائے 
چھوٹے سے ہاتھ رکھ كے دلِ درد ناک پر 
دے مارا سَر کو بالی سكینہؑ نے خاک پر 
حسینؑ حسینؑ حسینؑ