Beh raha hay khoon ka darya lasha e Shabbir se
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Beh raha hay khoon ka darya laashaye Shabbir say
Pani pani ki sada aati hay zakhme teer say
Beh raha hay khoon ka darya laashaye Shabbir say

1) Laashaye Akbar para hay khoon may dooba huwa (x2)
   Kehdo wapas laut jaaye qaside hamsheer say
   Beh raha hay khoon ka darya laashaye Shabbir say
   Haey haey Hussain haey haey Hussain

2) Karbala ke dasht may tha jurm pani maangna
   Ho gayay khamosh Asghar Hurmula ke teer say
   Beh raha hay khoon ka darya laashaye Shabbir say
   Haey haey Hussain haey haey Hussain

3) Jiske bosay leke milta tha Mohammad ko sukoon
   Wo gulu kaata gaya hay aaj kund shamsheer say
   Beh raha hay khoon ka darya laashaye Shabbir say
   Haey haey Hussain haey haey Hussain

4) Sar barehna ho gayi hay lut gayi hain chaadarain
   Jinko dhaampa tha nabi ne chaadre tatheer say
   Beh raha hay khoon ka darya laashaye Shabbir say
   Haey haey Hussain haey haey Hussain

5) Shaam may jaaogi nangay sar mere marnay ke baad
   Hoke rukhsat keh rahay thay shaah-e-deen hamsheer say
   Beh raha hay khoon ka darya laashaye Shabbir say
   Haey haey Hussain haey haey Hussain

6) Aaye hain ahlay haram Gulzaar kyun darbaar may
   Abid-e-beemaar hain jakre huay zanjeer say
   Beh raha hay khoon ka darya laashaye Shabbir say
   Haey haey Hussain haey haey Hussain

بہہ رہا ہے خو ںکا دریا لاشہِ شبیرؑ سے
پانی پانی کی صدا آتی ہے زخمِ تیر سے
بہہ رہا ہے خو ںکا دریا لاشہِ شبیرؑ سے

لاشہِ اکبرؑ پڑا ہے خون میں ڈوبا ہوا
کہہ دو واپس لوٹ جائیں قاصدِ ہمشیر سے
بہہ رہا ہے خو ںکا دریا لاشہِ شبیرؑ سے

کربلا کے دشت میں تھا جرم پانی مانگنا
ہو گئے خاموش اصغر حُرملا کے تیر سے
بہہ رہا ہے خو ںکا دریا لاشہِ شبیرؑ سے

جس کے بوسے لے کے ملتا تھا محمدؐ کو سکوں
وہ گُلو کاٹا گیا ہے آج کُند شمشیر سے
بہہ رہا ہے خو ںکا دریا لاشہِ شبیرؑ سے

سر برہنہ ہو گئی ہیں لُٹ گئی ہیں چادریں
جن کو ڈھانپا تھا نبی نے چا درِ تطہیر سے
بہہ رہا ہے خو ںکا دریا لاشہِ شبیرؑ سے

شام میں جاؤ گی ننگے سر میرے مرنے کے بعد
ہو کے رخصت کہہ رہے تھے شاہِ دیں ہمشیر سے
بہہ رہا ہے خو ںکا دریا لاشہِ شبیرؑ سے

آئے ہیں اہلِ حرم گُلزار کیوں دربار میں
عابدِ بیمارؑ ہیں جکڑے ہوئے زنجیر سے
بہہ رہا ہے خو ںکا دریا لاشہِ شبیرؑ سے