Zainab hay pareshan aey raat zara tham ja
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



زینب ہے پریشان اے رات ذرا تھم جا

روک سحر کو آنے سے تُو ، کہتے ہیں تجھ سے میرے آنسو
رکھ لے پردیسی کا پردہ ، رہنے دے اندھیارا نہ جا
اے رات ذرا ۔۔۔۔۔

زخمی کانوں کی اِک بچی ، شدتِ غم سے سو نہ سکے گی
دوڑے گی وہ جانبِ مقتل ، ٹھوکر کھاتی دُکھیا نہ جا
اے رات ذرا ۔۔۔۔۔

بیوہ ہو گی دولہن ایسی ، جس کے ہاتھ میں تازہ مہندی
بین کرے گی آہیں بھریں گی ، کہہ کر دولہن دولہا نہ جا
اے رات ذرا ۔۔۔۔۔

اچھا اتنی دیر تُو رُک جا ، جب ہو سفر زندان کو میرا
شام تلک تُو ساتھ میں رہنا , بن کر میرا پردہ نہ جا
اے رات ذرا ۔۔۔۔۔

رات مگر ریحان نہ ٹھہری ، کہتی تھی زینبؑ بیچاری
آئی رضا وہ صبح شہادت ، سورج کیونکر کہتا نہ جا
اے رات ذرا ۔۔۔

Zainab hay pareshan aey raat zara tham ja

1) Rok sehar ko aanay say tu 
   Kehte hain tujhse mere aansu (x2)
   Rakhlay pardesi ka parda 
   Rehne day andhiyara na jaa
   Aey raat zara tham ja

2) Zakhmi kano ki ek bachi 
   Shiddat-e-gham se so na sakay gi(x2)
   Dauregi wo jaanibe maqtal 
   Thokar khati dukhiya na jaa
   Aey raat zara tham ja

3) Bewa hogi dulhan aisay
   Jiske haath may taaza mehndi (x2)
   Bain karay gi aahain bharay gi 
   Kehkar dulha dulha na jaa
   Aey raat zara tham ja

4) Acha itni dair tu ruk ja 
   Jab ho safar zindan ko mera (x2)
   Shaam talak tu saath may rehna 
   Bankar mera parda na jaa
   Aey raat zara tham ja

5) Raat magar Rehan na thehri 
   Kehti thi Zainab bechari (x2)
   Aayi Raza wo subhe shahadat 
   Suraj kyunkar kehta na jaa
   Aey raat zara tham ja