Tamam alam may aaj matam Hussain bekas ka ho raha hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Tamaam aalam may aaj matam, Hussain bekas ka ho raha hay
Alam gharon may sajay huway hain, dilon may farsh-e-aza bicha hay
Tamaam aalam may aaj matam, hussain bekas ka ho raha hay

1) Siyah kapre siyah chadar, ghamon ki gardo ghubaar sar par (x2)
   Hain sogwaron kay ashk jaari, ke sani-e-Zehra be rida hay
   Tamaam aalam may aaj matam, hussain bekas ka ho raha hay

2) Na chashme purnam ho kyon sawali, juloos hay zuljanah khaali (x2)
   Ke mera duldul sawar-e-maula, zamin-e-karbal may so raha hay
   Tamaam aalam may aaj matam, hussain bekas ka ho raha hay

3) Alam may mashk-e-Sakina dekho, to momino bas yeh keh ke rolo (x2)
   Chacha bhatiji may kya hay nisbat, wafa-e-abbas kya wafa hay
   Tamaam aalam may aaj matam, hussain bekas ka ho raha hay

4) Hussain peeri may dil sambhale, ke dil se uljhi sina nikaale (x2)
   Jawaan beta lahu may dooba, zameen pe aeri ragar raha hay
   Tamaam aalam may aaj matam, hussain bekas ka ho raha hay

5) Na maar barchi dil-e-nabi par, abhi huway hai jawaan Akbar (x2)
   Ye qatl jisko tu kar raha hay, yehi to ham shakl-e-Mustafa hay
   Tamaam aalam may aaj matam, hussain bekas ka ho raha hay

6) Madinay walo khamosh rehna, ghareeb Zainab say kuch na kehna (x2)
   Basa huwa ghar jo le gayi thi, wo karbala may ujad gaya hay
   Tamaam aalam may aaj matam, hussain bekas ka ho raha hay

7) Azaa-e-Shabbir hay ibadat, janab-e-Zainab ki hay amaanat
   Ye nauha teray qalam se mehshar, janab-e-Zahra ki ek ataa hay
   Tamaam aalam may aaj matam, hussain bekas ka ho raha hay

تمام عالم میں آج ماتم، حسینؑ بے کس کا ہو رہا ہے
علم گھروں میں سجے ہوئے ہیں، دلوں میں فرشِ اعزا بچھا ہے
تمام عالم میں آج ماتم، حسینؑ بے کس کا ہو رہا ہے

سیاہ کپڑے سیاہ چادر، غموں کی گرد و غبار سر پر
ہیں سوگواروں کے اشک جاری ، کے ثانیءِ زہراؑ بےردا ہے
تمام عالم میں آج ماتم، حسینؑ بے کس کا ہو رہا ہے

نہ چشمِ پُرنم ہو کیوں سوالی، جلوس ہے ذوالجناح خالی
کہ میرا دُلدُل سوارِ مولا، زمینِ کربل میں سو رہا ہے
تمام عالم میں آج ماتم، حسینؑ بے کس کا ہو رہا ہے

علم میں مشکِ سکینہؑ دیکھو، تو مومنو بس یہ کہہ کے رو لو
چچا بھتیجی میں کیا ہے نسبت، وفائے عباسؑ کیا وفا ہے
تمام عالم میں آج ماتم، حسینؑ بے کس کا ہو رہا ہے

حسینؑ پیری میں دل سنبھالے، کے دل سے اُلجھی سناں نکالے
جوان بیٹا لہو میں ڈوبا، زمیں پہ ایڑی رگڑ رہاہے
تمام عالم میں آج ماتم، حسینؑ بے کس کا ہو رہا ہے

نہ مار برچھی دلِ نبی پر، ابھی ہوئے ہیں جوان اکبرؑ
یہ قتل جس کو توں کر رہا ہے، یہی تو ہم شکلِ مصطفیٰؐ ہے
تمام عالم میں آج ماتم، حسینؑ بے کس کا ہو رہا ہے

مدینے والو خموش رہنا، غریب زینبؑ سے کچھ نہ کہنا
بسا ہوا گھر جو لے گئی تھی، وہ کربلا میں اُجڑ گیا ہے
تمام عالم میں آج ماتم، حسینؑ بے کس کا ہو رہا ہے

عزائے شبیرؑ ہے عبادت ، جنابِ زینبؑ کی ہے امانت
یہ نوحہ تیرے قلم سے محشر ، جنابِ زہراؑ کی اک عطا ہے
تمام عالم میں آج ماتم، حسینؑ بے کس کا ہو رہا ہے