Arbaeen karna hay shah e karbalayi ka
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

اربعین کرنا ہے شاہِ کربلائی کا

لے کے داغ سینے پہ شاہ کی جدائی کا
حق ادا کرے زینب کیسے اپنے بھائی کا
قافلہ اُتر آیا ، صبر کی خدائی کا
کربلا کے میدان پر فاطمہ کی جائی کا
اربعین کرنا ہے ۔۔۔۔۔

موت کے بیابان میں زندگی کا ماتم ہے
ظلم کے اندھیروں میں روشنی کا ماتم ہے
آنسوئوں کے طوفاں میں تشنگی کا ماتم ہے
اک بہن کے حصے میں ہر کسی کا ماتم ہے
اربعین کرنا ہے ۔۔۔۔۔

بھائی کیا سُنائوں میں ہم پہ کیا ستم گزرے
بعدِ عصرِ عاشورہ بے کفن تھے سب لاشے
شامِ غم کے جاتے ہی موت کے بڑھے سائے
چھِن گئی ردا میری بھائی جل گئے خیمے
اربعین کرنا ہے ۔۔۔۔۔

دور تک نگاہوں میں شام کا اندھیرا ہے
کربلا سے کوفہ تک حادثوںنے گھیرا ہے
جب سے نونہالوں نے منہ کو اپنے پھیرا ہے
مامتا کی گودی میں موت کا بسیرا ہے
اربعین کرنا ہے ۔۔۔۔۔

بعدِ کربلا بھائی ، ہر قدم قیامت تھی
بے ردا رسن بستہ راہِ شام سے گزری
بھائی ہم تماشا تھے راستے تماشائی
ہر قدم دُعا یہ تھی کاش موت آ جائے
اربعین کرنا ہے ۔۔۔۔۔

بھائی قید خانے کی تیرگی سے ہو آئے
آپ کی امانت کو ظلمتوں میں کھو آئے
خون گوشواروں کاآنسوئوں سے دھو آئے
یوں سکینہ بی بی کو سب اسیر رو آئے
اربعین کرنا ہے ۔۔۔۔۔

سب سے جدا ہو کر جب مدینہ جائوں گی
جاکے ماں کی تربت پر مرثیہ سُنائوں گی
کربلا کے مقتل میں کیا ہوا بتائوں گی
بھائی اپنے بازوئوں کے نیل بھی دیکھائوں گی
اربعین کرنا ہے ۔۔۔۔۔

بھائی اب خدا حافظ قبر سے چلی زینب
بِن تیرے گزارے گی کیسے زندگی زینب
اُٹھ گئی فرید آخر کہہ کے یا علی زینب
رنج و غم کی دُنیا میں پھر سے کھو گئی زینب
اربعین کرنا ہے ۔۔۔۔

Arbaeen karna hay shah-e-karbalayi ka

1) leke daagh seene par shah ki judaai ka
   haq ada kare zainab kaise apne bhai ka
   qaafila utar aaya, sabr ki khudayi ka
   karbala ke maidaan par fatima ki jaayi ka
   Arbaeen karna hay shah-e-karbalayi ka

2) maut ke bayaabaan may zindagi ka maatam hay
   zulm ke andheron may roshni ka maatam hay
   aansuon ke toofaan may tashnagi ka maatam hay
   ek behan ke hissay may har kisi ka maatam hay
   Arbaeen karna hay shah-e-karbalayi ka

3) bhai kya sunaaun mai hum pe kya sitam guzre
   baad-e-asr-e-aashoora be-kafan thay sab laashe 
   shaam-e-gham ke jaatay hi maut ke badhe saaye
   chin gayi rida meri bhai jal gaye qaimay
   Arbaeen karna hay shah-e-karbalayi ka

4) door tak nigaahon may shaam ka andhera hay
   karbala say kufa tak haadason ne ghayra hay
   jabse nowne-haalon ne moo ko apne phera hay
   maamta ki godhi may maut ka basera hay
   Arbaeen karna hay shah-e-karbalayi ka

5) baad-e-karbala bhai, har qadam qayamat thi
   be-rida rasan basta raah-e-shaam se guzri
   bhai hum tamaasha thay raastay tamaashayi
   har qadam dua yeh thi kaash maut aajaaye
   Arbaeen karna hay shah-e-karbalayi ka

6) bhai qaid khaanay ki teeragi se ho aaye
   aap ki amaanat ko zulmaton may kho aaye
   khoon goshwaaron ka aansuon say dho aaye
   yun sakina bibi ko sab aseer ro aaye
   Arbaeen karna hay shah-e-karbalayi ka

7) sab se juda ho kar jab madina jaaungi
   jake maa ki turbat par marsiya sunaungi
   karbala ke maqtal may kya huwa bataungi
   bhai apnay baazu ke neel bhi dikhaungi
   Arbaeen karna hay shah-e-karbalayi ka

8) bhai ab khudahafiz khabr say chali zainab
   bin tere guzaa-regi kaisay zindagi zainab
   uth gayi fareed aakhir keh ke ya ali zainab
   ranjo gham ki dunya may phir say kho gayi zainab
   Arbaeen karna hay shah-e-karbalayi ka