Koi ho to chalay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Khudaya (x4)

Koi ho to chale khudaya
Koi ho to chale
Istighasa hay sar-e-daar
Koi ho to chale
Aik pyaase pe hay yalghaar
Koi ho to chale
Istighasa hay sar-e-daar
Koi ho to chale (x2)

1) Qaafile so gaya maqtal mein sare shaam sabhi (x2)
Reh gaya Qaafila saalar
Koi ho to chale (x2)

2) Aik beta hay jo gehwaare se utra naa kabhi (x2)
Doosra beta hay beemar
Koi ho to chale (x2)

3) Khud ko jhule se ghira dete hay jaane waale (x2)
Kown aisa hay wafaadar
Koi ho to chale (x2)

4) Reh gaya naizon ke jangal mein musaffir tanha (x2)
Ye shahadat ke hain aasar
Koi ho to chale (x2)

5) Lamha lamha ye sadaa deti hay aashoor ki shaam (x2)
Beriyan hoti hain tayyar
Koi ho to chale (x2)

6) Allah Allah ye lahu pehnaye huwe tanhaayi (x2)
Lut gayi kis ki ye sarkaar
Koi ho to chale (x2)

7) Ye hain naamoos-e-nabi khayme se kaise nikle (x2)
Kya kare saahib-e-kirdaar
Koi ho to chale (x2)

8) Jaane ye kown pase khayma hay girya girya (x2)
Hay koi is ka azaadar
koi ho to chale (x2)

9) Jis tarha se dare zindaan pe sakina ro eey (x2)
Saath rooey daro deewaar
Koi ho to chale (x2)

10) Kis ke lehje mein Ali bol rahen hay logo (x2)
Kown bola sar-e-darbaar
Koi ho to chale (x2)

11) Beriyaan jis ki musibat pe lahu roti hain (x2)
Kown aaya sar-e-baazar
Koi ho to chale (x2)

12) Jo ho us fawj-e-mukhaalif ka sipahi na chale (x2)
Han magar Hur sa tarafdaar
Koi ho to chale (x2)

13) Ye sadaa aaj bhi maqtal se hilal aati hay (x2)
Kown haq ka hay talabgaar
Koi ho to chale (x2)

Koi ho to chale khudaya
Koi ho to chale khudaya

خدایا خدایا خدایا خدایا
ھل من ناصر ینصرنا

کوئی ہو تو چلے’خدایا
کوئی ہو تو چلے’استغاثہ ہے سردار
کوئی ہو تو چلے’ایک پیاسے پہ ہے یلغار
کوئی ہو تو چلے’استغاثہ ہے سردار
کوئی ہو تو چلے’کوئی ہو تو چلے

قافلہ سوگيا مقتل میں سر شام سبھی
رہ گیا قافلہ سالار کوئی ہو تو چلے

ایک بیٹا ہے جو گہوارہ سے اترا نہ کبھی
دوسرا بیٹا ہے بیمار کوئی ہو تو چلے

خود کو جھولے سے گرا دیتے ہیں جانے والے
کون ایسا ہے وفادار کوئی ہو تو چلے

رہ گیا نیزوں کے جنگل میں مسافر تنہا
یہ شہادت کے ہیں آثار کوئی ہو تو چلے

لمحہ لمحہ یہ صدا دیتی ہے عاشور کی شام
بیڑیاں ہوتی ہیں تیار کوئی ہو تو چلے

اللہ اللہ یہ لہو پہنے ہوۓ تنہائ
لٹ گئ کس کی یہ سرکار کوئی ہو تو چلے

یہ ہیں ناموس نبیۖ خیمے سے کیسے نکلیں
کیا کرے صاحب کردار کوئی ہو تو چلے

جانے یہ کون پس خیمہ ہے گریاں گریہ
ہے کوئی اس کا عزادار کوئی ہو تو چلے

اس طرح سے در زنداں پہ سکینہ روئ
ساتھ روۓ در و دیوار کوئی ہو تو چلے

کس کے لہجے میں علی بول رہے ہیں لوگوں
کون بولا سر دربار کوئی ہو تو چلے

بیڑیاں جس کی مصیبت پہ لہو روتی ہیں
کون آیا سر بازار کوئی ہو تو چلے

جو ہو اس فوج مخالف کا سپاہی نہ چلے
ہاں مگر حر سا طرفدار کوئی ہو تو چلے

یہ صدا آج بھی مقتل سے ہلال آتی ہے
کون حق کا ہے طلب گار کوئی ہو تو چلے

کوئی ہو تو چلے’خدایا
کوئی ہو تو چلے’خدایا