Mujrae khalq may in ankhon nay kia kia dekha
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Mujraee khalq mein, in aankhon ne, kya kya dekhaaaa
Par kahin sibte, payambar sa na, aaqaa dekhaaaa
Mujraee khalq mein.

Maine dekha alaame shah ko, aluda ba-khoon,
Main ne nezay pay sar-e dilbar-e-Zehra dekhaaa
Mujraee khalq mein.

Maine dekha Ali Asghar ka galaa khoon mein tarrr
Maine Abbas ko, reti pe, tadapta dekhaaa
Mujraee khalq mein,

Ek gathdi shahe deen pusht pe laaye us mein
Main ne tukde huway, Qasim ka saraapa dekhaaa
Mujraee khalq mein

Gir paday sibt-e-nabi, thaam kay haathon say jigar
Ali Akbar ko jo rayti pay tadapta dekha
Mujraee khalq mein

Bay-rida khalq nay us bibi kay sar ko dekha
Jiski maadar ka, kisi nay na janaaza dekha
Mujraee khalq mein

Haaye kyon ho na gayee, saur ke, in aankhon ne
qaid khaanay mein Sakina ka, janaaza dekhaaa
Mujraee khalq mein

Boli ye Zainab-e-muztar, kay khooda khair karay
Raat ko khwab mein, uriyan sar-e-Zehra dekhaaa
Mujraee khalq mein

Jaake Zainab ne, madine mein kaha, Sughra say
Kahoon kis moonsay ke pardes mein, kya kya dekhaaa
Mujraee khalq mein

Zulm aai Mujraee Sajjad ne, kya kya dekha
Ghar loota, qaid hue, baap ka laashaa dekhaaa
Mujraee khalq mein

مجرئی خلق میں ان آنکھوں نے کیا کیا دیکھا
پر کہیں سبط پیمبرؑ سا نہ آقا دیکھا

میں نے دیکھاعلم شاہؑ کوآلودہ بہ خوں
میں نے عباسؑ کو بے جا لب دریا دیکھا

میں نےدیکھا علی اصغرؑ کا گلا خون میں تر
میں نے زخمی علی اکبرؑ کا کلیجہ دیکھا

ایک گٹھڑی شہ دیںؑ پشت پہ لائے اُس میں
میں نے ٹکڑے ہویے قاسمؑ کا سراپا دیکھا

بے ردا خلق نے اس بی بی کے سر کو دیکھا
جس کی مادر کا کسی نے نہ جنازہ دیکھا

کہتی تھیں زینبِؑ مضطر کہ خدا خیر کرے
رات کو خواب میں عریاں سرِ زہراؑ دیکھا 

جاکے زینبؑ نے مدینے میں کہا صغراؑ سے
کہوں کس منہ سے کہ پردیس میں کیا کیا دی