Dard Sajjad ke qirtas pay laoon kaisay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

درد سجادؑ کے قرطاس پہ لائوں کیسے
ہائے روتا ہے قلم لفظ بنائوں کیسے

زخم جو جسم پہ آئے ہین دکھا سکتا ہوں
دل نے جو شام میں کھائے ہیں دکھاؤں کیسے

جن کی مادر کا جنازہ تھا اُٹھا رات کے وقت
سر برہنہ سرِ بازار بھلاؤں کیسے

کربلا کوفہ جو شام میں تکریم ہوئی
روحِ اجداد تڑپتی ہے سناؤں کیسے

رسیاں پاؤں میں چھالے تھے تماچوں کے نشاں
حسرت و یاس کی میت کو اٹھاؤں کیسے

پا بجولا ہوں میں ہے طوقِ گراں زیبِ گلو
اونٹوں سے گرتے ہوئے بچے اٹھاؤں کیسے

ابر تھا پتھروں کا قہقہے بھی طعنے تھے
تنگ بازاروں سے بازاری ہٹاؤں کیسے

نوسو درباری تھے ناموسِ نبی پیش ہوئی
ہوں غیور خوں نہ آنکھوں سے بہاؤں کیسے

اے زمانے کے یزیدو نہ کہو نجفی سے
خاک کی نورسی اوقات دکھاؤں کیسے